دگ وجے نے مہاراشٹر میں بی جے پی حکومت بننے کو لے کر مودی پر کسا طنز

 

بھوپال، اپنے بیانات کو لے کر ہمیشہ میڈیا کی شہ سرخیوں میں رہنے والے کانگریس کے سینئر لیڈراورراجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ اور مدھیہ پردیش کے سابق وزیر اعلی دگ وجے سنگھ نے ہفتہ کو سوشل میڈیا کے ذریعے مہاراشٹر میں بی جے پی کی طرف سے حکومت بنانے کو لے کر وزیر اعظم نریندر مودی پر طنز کسا ہے۔ ساتھ ہی انہوں نے اسے آئین کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے مہاراشٹر کے گورنر سے سوال پوچھے ہیں۔

دگ وجے سنگھ نے ہفتہ کو ٹوئٹر کے ٹویٹ کیا ہے’مودی جی کاعوام کو انتخابی نعرہ ’نہ کھاؤں گا نہ کھانے دوں گا‘۔ اب وزیر اعظم مودی جی کا نعرہ ہے’خوب کھاؤ اور خوب کھا کر کھلا کر بی جے پی میں آ جاؤ ای ڈی ، سی بی آئی، آئی ٹی سے نجات پائیے‘کیونکہ مودی ہے تو سب کچھ ممکن ہے‘۔ گناہ کا گھڑا پھوٹ کر رہے گا‘۔

انہوں نے سلسلہ وار ٹویٹ کر کے مہاراشٹر میں بی جے پی کی حکومت بننے پر گورنر سے بھی سوال پوچھے ہیں۔ انہوں نے ٹویٹ کیا ہے کہ’’مہاراشٹر کے گورنر موصوف سے میرے کچھ بنیادی سوالات ہیں، کیا گورنر جی کو این سی پی کی طرف سے حمایت کا کوئی خط ملا ہے؟ اگر نہیں کیا ہے تو کیا گورنر جی نے آئین کی خلاف ورزی نہیںکی ہے؟ عام طور پر گورنر جی کو این سی پی کے صدر جینت پاٹل کا ممبران اسمبلی کے دستخط سمیت خط ملنے کے بعد ہی حلف کے لئے مدعو کرنا چاہئے تھا‘۔

انہوں نے اگلے ٹویٹ میں لکھا ہے کہ’اتفاق سے معززسی جے آئی بھی مہاراشٹر کے ہیں۔ مہاراشٹر کے ایڈووکیٹ جنرل رہے ہیں، کیا ان کے رہتے ہوئے اگر ان کے سامنے سپریم کورٹ میں یہ آئین کی خلاف ورزی کا کیس آتا ہے تو کیا وہ اپنا آئین کی پاسداری کریں گے؟ مجھے یقین ہے وہ پاسداری کریں گے‘۔

انہوں نے مہاراشٹر میں حکومت بنانے کے کوشش کر رہے سیاسی جماعتوں کو مشورہ دیتے ہوئے ٹویٹ کیا ہے کہ’شیوسینا، این سی پی اور کانگریس کو اپنی طاقت زمین پر دکھاکر سڑکوں پر اترنا چاہئے دیکھتے ہیں کہ ممبئی اور مہاراشٹر کے عوام کس کے ساتھہیں؟ تینوں جماعتوں کے لیے یہ وجود کا سوال ہے۔ بالخصوص ادھو اور ٹھاکرے خاندان کے لیے یہ عزت کا سوال ہے‘۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *