دہلی اقلیتی کمیشن کا سنٹرل انڈسٹریل سیکیورٹی فورس کے ڈائرکٹر جنرل کو خط 

Share Article
zafarul-islam
نئی دہلی: پچھلے ماہ دھولا کنواں مٹرو اسٹیشن پر ایک سکھ شہری کو سنٹرل انڈسٹریل سیکیورٹی فورس کے اہل کاروں نے مٹرو میں سوار ہونے سے روک دیا تھا کیونکہ وہ گلے سے کرپان لٹکائے ہوئے تھا۔ سکھ شہری نے اہلکاروں کو سول اوییشن منسٹری کا خط دکھایا جس میں چھ انچ کی کرپان لے کر کوئی بھی سکھ ہندوستان کے اندر فضائی پروازوں میں سفر کرسکتا ہے لیکن سیکیوریٹی اہلکاروں نے سکھ شہری کی ایک نہیں سنی۔ مذکورہ شہری کی شکایت پر دہلی اقلیتی کمیشن نے سنٹرل انڈسٹریل سیکیورٹی فورس کے ڈائرکٹر جنرل کو خط لکھ کر بتایا ہے کہ آئین ہند کی دفعہ (52) کے تحت ہر سکھ شہری کو کرپان لے کر چلنے کا آئینی حق حاصل ہے۔ کمیشن نے اپنے مکتوب میں کہا کہ” ہم سمجھتے ہیں کہ مذکورہ واقعہ لاعلمی میں ہوا ہے، لیکن اگر یہ عمل دوبارہ مستقبل میں دہرایا گیا تو کمیشن اس پر سخت قدم اٹھائے گا “۔صدر اقلیتی کمیشن ڈاکٹر ظفرالاسلام خان نے اپنی ہدایت میں سنٹرل انڈسٹریل سیکیورٹی فورس کو لکھا ہے کہ یہ معلومات دہلی مٹرو اسٹیشنوں ، ریلوے اسٹیشنوں اور ہوائی اڈوں وغیرہ میں مذکورہ فورس کے اہلکاروں تک پہنچادی جائیں تاکہ مستقبل میں کسی سکھ شہری کے مذہبی حقوق کی پامالی نہ ہو۔

 

پڑھیں   سدرشن ٹی وی کو اقلیتی کمیشن کا نوٹس
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *