بس میں کھڑکی کے پاس بیٹھے مسافر کا ہاتھ کٹا

Share Article

 

میٹروپولیٹن کولکاتہ میں جمعرات کی صبح ایک لاپروائی کی وجہ سے ایک مسافر کو اپنا ہاتھ گنوانا پڑا ہے۔ حادثہ ٹالی گنج کرونامئی کالی مندر کے پاسکا ہے۔ مسافر کا نام اتپل کرمکار (45) ہے۔ وہ بھوانی پور رو پ نارائن نندن لین کے رہنے والے ہیں۔

پولیس نے بتایا کہ حادثہ صبح 9:30 بجے کاہے۔ اتپل کرمکارہردیوپور سے بس پر چڑھے تھے۔ ویسٹ بنگال ٹرانسپورٹ کارپوریشن کی سرکاری بس روٹ نمبر S-4 سی کی کھڑکی کے پاس بیٹھے تھے۔ کھڑکی کے باہر ان کا ہاتھ تھوڑا سا باہر نکلا ہوا تھا۔ بس کے کالی مندر کے پاس سے گزرنے کے دوران زیر تعمیر عمارت کے پلر سے تصادم کی وجہ سے اتپل کا ہاتھ کٹ کر کھڑکی کے باہر جا گرا۔ وہ بس میں ہی بیہوش ہو گئے۔ تھوڑی دور جا کر ڈرائیور نے بس روک دی، ادھرحادثے کے بعد بڑی تعداد میں مقامی لوگ جمع ہو گئے۔ فوری طور پر مسافر کے کٹے ہوئے ہاتھ کو نالے سے نکال کر اتپل اور کٹے ہوئے ہاتھ کے حصے کو ایم آر- بانگر اسپتال پہنچایا۔، وہاں آپریشن کا عمل جاری ہے۔

حادثے کے بعد غیر قانونی طریقے سے عمارت کی تعمیر کا الزام لگاتے ہوئے مشتعل لوگوں نے احتجاج شروع کر دیا۔ عمارت کے اس پلر کو توڑنے کے لئے لوگ سابل، اینٹ، پتھر وغیرہ سے حملہ کرنے لگے تھے۔ موقع پر بڑی تعداد میں پولیس اہلکاروں کی تعینات کر کے حالات کو سنبھالا جا سکا ہے۔ پولیس مسافروں سے پوچھ گچھ کر رہی ہے۔

وہی اسپتال ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ جس حالات میں حادثہ پیش آیا ہے اورہاتھ کٹا ہے اسے دیکھتے ہوئے اسے دوبارہ جوڑنا ممکن محسوس نظر نہیں آتا، پھر بھی کوشش کی جا رہی ہے ۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *