ہندو مسلم والے بیان پراروندکیجریوال کے خلاف شکایت

Share Article

kejriwal

ملک میں لوک سبھاانتخابات کا ماحول ہے۔انتخابات کولیکرلیڈران خوب بیان بازی کررہے ہیں۔اسی بیچ دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال اپنے ایک بیان کو لے کر تنازعات میں گھر گئے ہیں۔کانگریس سے اتحاد کرنے میں ناکام رہے کیجریوال نے پارٹی کا منشور جاری کرتے ہوئے کہا کہ کوئی بھی ہندو کانگریس کو ووٹ دینے نہیں جا رہا ہے، صرف مسلمانوں میں تھوڑا بہت کنفیوزن ہے۔کانگریس ان کے اس بیان کو لے کر دہلی کے چیف الیکشن افسر سے شکایت کی ہے۔کانگریس لیڈر سندیپ دکشت نے اپنی شکایت میں کہا کہ کیجریوال فرقہ وارانہ بنیاد پر ووٹ مانگ رہے ہیں اور لوگوں کو تقسیم کر رہے ہیں اس لئے یوگی اور مایاوتی کی طرز پر ان کے پرچارکرنے پر بھی پابندی لگا دی جائے۔

سابق ممبر پارلیمنٹ سندیپ دکشت کی قیادت میں دہلی پردیش کانگریس کے ایک وفد نے دہلی کے چیف الیکشن افسر رنبیر سنگھ سے ملاقات کر انہیں اپنی مانگ سے منسلک میمورنڈم سونپا۔ دہلی کانگریس نے کیجریوال کے بیان کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ دہلی کے وزیر اعلی کے خلاف سخت قدم اٹھایا جانا چاہئے۔سندیپ دیکشت نے صحافیوں کو بتایا، ”ریاستی کانگریس کے وفد نے الیکشن کمیشن سے یہ مطالبہ کیا ہے کہ اس قسم کے فرقہ وارانہ، اشتعال انگیز اور غیر ذمہ دارانہ بیانات کو دیکھتے ہوئے الیکشن کمیشن کو لوک سبھا انتخابات کے دوران وزیر اعلی کیجریوال کے انتخابی مہم پر پابندی لگانی چاہئے“۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *