’مسعود اظہر جی‘اور’حافظ سعید جی‘پر گرمائی سیاست، بی جے پی – کانگریس آمنے سامنے

Share Article

ravishankar-prasad-rahul

لوک سبھا سے پہلے ایک انتخابی ریلی میں بھارتیہ جنتا پارٹی کو گھیرنے کے چکر میں کانگریس صدر راہل گاندھی پیر کو جیش اظہر کے سرغنہ مسعود اظہر کو ’مسعود اظہر جی‘ بول بیٹھے، جس کے بعد سے ہی بی جے پی ان پر حملہ آور ہے،لیکن اب کانگریس نے بھی بی جے پی کو کرارا جواب دیا ہے، کانگریس کی ترجمان پرینکا چترویدی نے منگل کی صبح مرکزی وزیر روی شنکر پرساد کی ایک ویڈیو ٹویٹ کیا ہے جس میں وہ سب سے زیادہ موسٹ وانٹیڈ دہشت گرد حافظ سعید کو ‘حافظ جی‘ کہہ رہے ہیں۔

دراصل راہل گاندھی نے اپنی ایک ریلی میں مسعود اظہر کو جی کہہ کر خطاب کر دیا تھا، جس کے بعد مرکزی وزیر اسمرتی ایرانی نے ٹویٹ کرکے راہل کے ویڈیو کے ساتھ اس کی تنقید کی تھی۔ جس پر کانگریس نے بھی یاد دلایا کہ بی جے پی لیڈر اور وزیر قانون روی شنکر پرساد بھی ایسا ہی کارنامہ پہلے کر چکے ہیں۔

تاہم بعد میں کانگریس کی جانب سے اس پر صفائی بھی آئی تھی۔ کانگریس کی جانب سے دلیل دی گئی کہ راہل گاندھی حکومت پر طنز کس رہے تھے، جو بی جے پی والوں کو سمجھ میں نہیں آیا۔

الٹا چور۔ چور کو ڈاٹے

جو خود پہلے یہ غلطی کر چکا ہے، یعنی روی شنکر پرساد نے بھی راہل کو ڈانٹ لگائی ہے،ٹویٹر پر روی شنکر پرساد نے لکھا ہے، کم آن راہل گاندھی جی ۔۔۔

دہشت گردوں کو احترام دینا نہ صرف غلط ہے بلکہ یا سخت جرم ہے، لیکن سوال یہ ہے، کہ اگر راہل گاندھی نے یہ جرم کیا تو اسمرتی ایرانی آگ بگولہ ہو گئی، وہیں جب یہی جرم اپنے وزیر نے کیا تھا تو،بی جے پی کی بڑبولی لیڈر اسمرتی ایرانی خاموش کیوں تھی؟ یعنی ہم کرے تو راس لیلا آپ کریں تو کریکٹر ڈھیلا،سیاست میں غلط یا صحیح کے دو مختلف پیمانے نہیں ہو سکتے۔ وہ لیڈر جو پہلے خود یہ ہی غلطی خود کر چکا ہو، وہی دوسرے کو نصیحت دے اس سے زیادہ شرم کی اور کیا بات ہوگی؟ یہ ہمارے لئے سوچنے کا موضوع ہے کہ ہماری سیاست کہاں اور کتنی حدتک گرتی جا رہی ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *