مرکزی وزیر اسمرتی ایرانی پر گھوٹالے کا الزام، کانگریس نے مانگا استعفیٰ

Share Article
pjimage
کانگریس نے مرکزی وزیر اسمرتی ایرانی پر بڑا حملہ بولا ہے۔ الزام لگایا ہے کہ اسمرتی ایرانی نے اپنے ایم پی فنڈ کا غلط استعمال کیا ہے۔کانگریس لیڈروں نے وزیر اعظم نریندر مودی سے اسمرتی ایرانی کو کابینہ سے ہٹانے اور ان کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

کانگریس لیڈروں نے اسمرتی ایرانی کو گھیرنے کے لئے ایک پریس کانفرنس میں کئی دستاویز بھی پیش کئے۔ کانگریس لیڈر شکتی سنگھ گوہل نے کہا، ’پی ایم مودی نے کہا تھا کہ میں نہ کھاتاہوں اور نہ کھانے دیتا ہوں، لیکن سچائی ہے کہ پی ایم اور ان کے قریبی کروڑوں سے کم کھاتے نہیں ہیں، سچ بولنے والے کو چین کی روٹی کھانے نہیں دیتے ہیں۔ اسمرتی ایرانی نے ایم پی بننے کے بعد ایک گاؤں گود لیا تھا، دراصل انہوں نے گاؤں گود نہیں لیا، بلکہ گاؤں کو ملنے والے پیسے اپنے جیب کے اندر کئے۔آنند ضلع کے کلکٹر نے ایم پی فنڈ جاری کرنے والے ڈپٹی سیکریٹری کو ایک خط لکھا تھا۔ اس میں انکشاف ہوا کہ اسمرتی ایرانی نے اپنے ایم پی فنڈ میں گھوٹالہ کیا۔‘
WhatsApp-Image-2019-03-04

کانگریس لیڈروں نے الزام لگایا کہ، ایگزیکٹیو ادارہ سرکاری ادارے کے علاوہ کوئی نہیں ہو سکتا یہ ہدایات ہے، لیکن مودی جی کی سب سے قریبی رہنما اسمرتی ایرانی نے کہا کہ ایگزیکٹیو ادارہ شاردا مزدور سہکاری سمیتی کو بنایا جائے۔اسمرتی ایرانی کے کہنے پر قوانین کو طاق پر رکھ کر شاردا مزدور کامدار منڈلی کو بغیر ٹینڈر کے ہی 232 کاموں کے ٹھیکے اور 5.93 کروڑ روپے ادا کرنے کے لئے مورد الزام ٹھہرایا ہے جس 84.53 لاکھ روپے کا فرضی ادائیگی شامل ہے۔ کلکٹر نے جب کچھ کاموں کی تحقیقات کرائی تو پتہ چلا کہ کہیں کوئی کام نہیں ہوا۔ سب کچھ فرضی ہے۔ تب کلکٹر نے کہا کہ ان سے قریب 4 کروڑ کی ریکوری کی جائے‘۔

رندیپ سرجیوالا نے کہا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی بے خوف کرپشن کرتی ہے۔ ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ مودی جی محترمہ اسمرتی ایرانی کو وزارت سے فوری طور پر برخاست اور بدعنوانی انسداد قانون اور تعزیرات ہند کی دوسری دفعات میں مقدمہ درج کیا جائے۔ ضرورت پڑی تو ہم عدالت کے ذریعے اسمرتی ایرانی پر ایف آئی آر درج کرائیں گے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *