سی بی آئی Vs مغربی بنگال: جسٹس ایل ناگیشور راؤ نے سماعت سے خود کو الگ کیا

Share Article

 

جسٹس راؤ نے کہا کہ وہ مغربی بنگال حکومت کے لئے بطور وکیل پیش ہو چکے ہیں لہٰذا اس معاملے کی سماعت نہیں کریں گے۔

 

Image result for sharda chit fund scam

نئی دہلی: سپریم کورٹ کے جج جسٹس ایل ناگیشور راؤ نے کروڑوں روپے کے شاردا چٹ فنڈ گھوٹالہ معاملے کی تحقیقات میں رکاوٹ ڈالنے کے الزام میں مغربی بنگال حکومت کے حکام کے خلاف مرکزی تفتیشی بیورو کی درخواست پر سماعت سے بدھ کو خود کو الگ کر لیا ۔

 

Image result for sharda chit fund scam

چیف جسٹس رنجن گوگوئی، جسٹس ایل ناگیشور راؤ اور جسٹس سنجیو کھنہ کی بنچ نے سی بی آئی کی عرضی پر سماعت یہ کہتے ہوئے ملتوی کردی کہ ان میں سے ایک جج اس معاملے کی سماعت کا حصہ نہیں بننا چاہتے۔ جسٹس راؤ نے کہا کہ چونکہ وہ ریاستی حکومت کی جانب سے بطور وکیل پیش ہو چکے ہیں، اس لئے وہ اس معاملے کی سماعت نہیں کر سکتے۔

 

Image result for sharda chit fund scam

یہ معاملہ اب 27 فروری کو اس کی پیٹھ کے سامنے سماعت کے لئے درج کیا گیا ہے جس کا حصہ جسٹس راؤ نہیں ہیں۔ کورٹ کے پانچ فروری کے حکم کے تحت 18 فروری کو مغربی بنگال کے چیف سکریٹری مالائی کمار ڈے، پولیس ڈائریکٹر جنرل وریندر کمار اور کولکتہ کے اس وقت کے پولیس کمشنر راجیو کمار نے ساردا چٹ فنڈ کیس سے متعلق توہین کے معاملے میں حلف نامے داخل کئے تھے۔

 

Image result for sharda chit fund scam

سی بی آئی نے شاردا چٹ فنڈ گھوٹالے سے متعلق معاملات کی تحقیقات کے سلسلے میں توہین کارروائی کے لئے درخواست دائر کی تھی۔ تفتیشی بیورو کا الزام تھا کہ انہوں نے ایجنسی کے کام میں رکاوٹ ڈالی اور وہ ساردا چٹ فنڈ گھوٹالے سے متعلق معاملات کے الیکٹرانک ثبوت کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کر رہے تھے۔اگرچہ مغربی بنگال حکومت اور اس کی پولیس نے جانچ بیورو کے ان الزامات کی تردید کی تھی کہ انہوں نے اسکینڈل کے معاملات کی تفتیش میں کوئی رکاوٹ ڈالی تھی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *