سی ٹی ای ٹی یعنی اساتذہ کی اہلیتی جانچ مسائل و مصائب کا انبار

سلمان فیصل
چھبیس جون2011 اُن آٹھ لاکھ لوگوں کے لیے یوم الحشر تھا، جو مستقبل میں استاد بن کر قوم کی خدمت کرنے کی امید و آرزوکے چراغ اپنے دلوں میں ہمہ وقت روشن رکھتے ہیں۔ ’’یو م الحشر‘‘ اس معنی میں تھا کہ اس دن سرکار کی جانب سے اساتذہ کی مستقل تقرری کے واسطے ان کی قابلیت اور صلاحیت کو پرکھنے کے لیے ایک ٹیسٹ رکھا گیا تھا اور ملک بھر میں مختلف مراکز پر امیدواروں کا ہجوم نفسی نفسی کے عالم میں تھا۔ بات در اصل یہ ہے کہ جس طرح کالجوں اور یونیورسٹیوں میں تقرری کے لیے NETکا معیار رکھا گیا ہے ، اسی طرح اسکول کی سطح پر اساتذہ کی تق

Read more

اسکالرشپ اسکیم:اقلیتی فرقہ کے طلباء کو کتنا فائدہ پہنچ رہا ہے

ڈاکٹر قمر تبریز
ہمارے ملک کے اندر بنیادی تعلیم کو بنیادی حق قرار دیا گیا ہے، لیکن افسوس کی بات یہ ہے کہ ملک کے اندر قانون تو بنا دیے جاتے ہیں ، انہیں ٹھیک سے لاگو نہیں کیا جاتا۔ نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ قانون کے رہتے ہوئے ملک کے عام شہری اس سے کوئی فائدہ نہیں حاصل کر پاتے۔ تعلیم کا بھی کچھ یہی حال ہے۔ یو پی اے حکومت نے 4 اگست 2009 کو پارلیمنٹ میں حق تعلیم بل پاس کیا تھا جس کے بعد ہندوستانی آئین کی دفعہ 21A کے تحت ملک کے 6 سے 14 سال کی عمر کے

Read more

مغربی بنگال میں اوقاف گھوٹالہ: سی بی آئی انکوائری میں تاخیر کیوں

انوار عالم خان
وزیراعلیٰ مغربی بنگال ممتا بنرجی نے 1996 میں چیف جسٹس آف انڈیا کو عام مسلمانوں کی شکایات کی بنیاد پر، اپنے ایک تحریری شکایت نامہ میں مغربی بنگال وقف بورڈ میں ہونے والی بد عنوانیوں اور مذکورہ بورڈ کی کار کردگیوں کی تفصیلی شکایت کرتے ہوئے ان سے تمام واقعات کی سی بی آئی سے تحقیقات کرانے کی مانگ کی تھی۔ 12 اپریل 1996 کو ان کے اس تحریری شکایت نامہ کو سپریم کورٹ کے اسسٹنٹ رجسٹرار نے مغربی بنگال کی سابقہ ریاستی حکومت کو بھیجتے ہوئے اس سے ایک تفصیلی رپورٹ طلب کر لی تھی۔مذکورہ واقعہ جسٹس جی آر بھٹاچارجی کی اس انکوائری رپورٹ سے ظاہر ہوتا ہے جسے کمیشن آف انکوائری ایکٹ 1952 کی دفعہ 3

Read more

ملک میں آبروریزی کے بڑھتے واقعات: قانون لاچار کیوں؟

عابد انور
حالیہ دنوں میں آبروریزی کے واقعات میں جس تیزی سے اضافہ ہورہا ہے اس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ مجرموں میں قانون کا کوئی خوف یا دہشت نہیں ہے۔ میڈیا جس تیزی سے اس واقعہ کو اٹھارہا ہے اسی تیزی سے اس میں اضافہ بھی ہورہا ہے۔ اترپردیش سمیت ملک کے دیگر حصوں میں آبروریزی کے بڑھتے واقعات نے خواتین اور اسکول و کالج جانے والی طالبات کود ہشت زدہ کررکھا ہے۔اس کے علاوہ کام کاجی خواتین بھی اس خوف میں مبتلا رہتی ہیں کہ کب کون سی مصیبت ان پر آن پڑے۔ہندوستان میںجہاں قوانین کے ان

Read more

عدالت،ایکوائرمنٹ اورعام آدمی: سپریم کورٹ کا یہ فیصلہ تاریخی ہے

ششی شیکھر
زمین وہ دولت ہے،جو ایک نسل دوسری نسل کو منتقل کرتی ہے یعنی کوئی اس کا مالک نہیں ہوتا۔ ہاں، کیئر ٹیکر کہہ سکتے ہیں۔ زمین اور کسان کے درمیان کچھ ایسا ہی رشتہ تھا۔ لیکن 90 کی دہائی کی شروعات میں ایکوائرمنٹ اور نجکاری کی آندھی آنے کے ساتھ ہی زمین اور کسان کے اس موروثی رشتے کو کمزور بنانے کی کوشش کی جانے لگی جو سرکار، بیورکریسی اور صنعت کاروں کے اتحاد کا نتیجہ تھی، کبھی ایس ای زیڈ کے نام پر، کبھی صنعتی ترقی کے نام پر ، ٹائون شپ کے نام پر، یہاں تک کہ سڑک (ایکسپریس وے) بنانے کے نام پر سرکار نے کسانوں سے ان کی زمین ہڑپنے کا کام کیا۔ سستی قیمتوں پر زمین لے کر حکومت صنعت کاروں کو اسے بیچنے لگی یعنی سرکار

Read more

مدیران کے سوال، وزیر اعظم کے جواب

جون،2011کو نئی دہلی میں اخبارات کے پانچ مدیروں (ٹی این نین، بزنس اسٹینڈرڈ؛ ایم کے رازدان، پی ٹی آئی؛ راج چین گپّا، ٹربیون؛ آلوک مہتہ، نئی دنیا؛ کمار کیتکر، دِویہ مراٹھی) کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ نے کہا کہ اس خیال کو تقویت حاصل ہو رہی ہے کہ موجودہ حکومت کا محاصرہ ہو چکا ہے اور ہم اپنے ایجنڈے کو پورا کرنے میں ناکام ہوگئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں ایک فضا قائم کی گئی ہے، جس میں میڈیا مدعی، استغاثہ اور جج کا کردار ادا کررہا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہم آج غیر یقینی دنیا میں

Read more

کیا پنچایتی راج دیہی کشمیریوں کی پیاس بجھا پائے گا؟

شمشادہ جان
ستائس جون 2011کو جموں و کشمیر کے نوجوان وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے کشمیر کے سرحدی اور پسماندہ ضلع کپواڑہ کا طوفانی دورہ کرتے ہوئے لنگیٹ، ہندوارہ اور وادیٔ لولاب میں منتخب پنچوں اورسرپنچوں کے جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ لوگوں کا ماننا تھا کہ کشمیری باشندے ووٹ ڈالنے نہیں آئیں گے، جس کو یہاں کے عوام نے غلط ثابت کرتے ہوئے ووٹوں کا ریکاڈ بنایا ہے۔ اب یہ کہا جا رہا ہے کہ ان پنچایتی سطح کے عوامی نمائندوں کو اختیارات نہیں دیے جائیں گے۔ ہم اسے بھی غلط ثابت

Read more

تیل کمپنیاں یا سرکار : ملک کون چلا رہا ہے

ڈاکٹر منیش کمار
یہ کیسی سرکار ہے، جو عوام کے خرچ کو بڑھا رہی ہے اور معیارِ زندگی کو گرا رہی ہے۔ ویسے دعویٰ تو یہ ٹھیک اس کے برخلاف کرتی ہے۔ وزیر خزانہ پرنب مکھرجی کہتے ہیں کہ سرکار اپنی پالیسیوں کے ذریعہ شہریوں کی کاسٹ آف لیونگ کو گھٹانا اور معیارِ زندگی کو بلند کرنا چاہتی ہے۔ لیکن وہ کون سی مجبوری ہے، جس کی وجہ سے پٹرول، ڈیزل اور رسوئی گیس کی قیمتیں بڑھائی جاتی ہیں۔ وزیر برائے پٹرولیم جے پال ریڈی کہتے ہیں کہ وہ اقتصادیات اور شہرت کے درمیان پھنس گئے۔ ویسے یہ اچھا بہانہ ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ قیمتیں اس لیے بڑھائی گئی ہیں، کیوں کہ بین الاقوامی بازار میں خام تیل کی قیمت بڑھ گئی ہے۔ یہ ایک جھوٹ ہے۔ وہ اس لیے، کیوں

Read more

اتر پردیش میں صحافیوں پر حملہ: سچ کہنے کی سزا

اجے کمار
مایاوتی حکومت اور اس کے نمائندوں نے ہر اس آواز کو کچل دینے کی قسم کھائی ہے،جو وزیر اعلیٰ مایاوتی یا ان کے ریاستی کام کے خلاف اٹھائی گئی ہو۔ مخالفین پر لاٹھی ڈنڈوں کی بوچھار اور تاجروں کو ٹارچر کرنے ، قانون کے محافظوں اور ٹیچروں کو دوڑا دوڑا کر پیٹنے والے مایا وتی کے مبینہ غنڈوں کا نشانہ اب کی بار میڈیا بنا۔ ڈپٹی سی ایم او ڈاکٹر سچان کے قتل کو موت ثابت کرنے میں لگی انتظامیہ کو جب یہ لگا کہ میڈیا کی وجہ سے سچ کا

Read more