یو پی اے کا فلاپ شو : دس برس مسلمانوں کو سبز باغ دکھاتے گزر گئے

اگراقلیتوں بشمول مسلمانوں کی پسماندگی دورکرکے انہیں ترقی کی دوڑ میں شامل کرانے کے لیے محض اعلانات اور فیصلے کافی ہیں تو پھر مرکزمیں کانگریس قیادت والی یوپی اے حکومت سب سے آگے ہے۔ اسی طرح یہ حکومت اس معاملے میں بھی سب سے آگے ہے کہ اس کے اتنے ڈھیر سارے اعلانات اور فیصلوں کے باوجود گزشتہ تقریباًدس برسوں میں مسلم اقلیت امپاور نہیں ہوپائی۔ حکومت اس میں بھی سب سے آگے رہی کہ فنڈ ’نئی روشنی‘ اسکیم کے تحت مختص ہوئے اقلیتی خواتین کے لیے مگر یہ گئے اقلیتی تنظیموں کے بجائے اکثریتی تنظیموں کی جھولی میں۔ گزشتہ دس برسوں میں مسلم اقلیت کے نتاظر میں یوپی اے کے فلاپ شو پر پیش ہےتنقیدی جائزہ:

Read more

تنہا چلیں گی بائیں بازو کی پارٹیاں

بی جے پی کے ریاستی دفتر میں کچھ رہنما آپس میں آئندہ ہونے والے پارلیمانی انتخابات کے بارے میں بات چیت کر رہے تھے۔ راجستھان، مدھیہ پردیش اور چھتیس گڑھ میں ملی جیت کا اثر ا ن کے چہرے پر صاف جھلک رہا تھا۔ نریندر مودی اور دوسری پارٹیوں کی ہوا میں اڑ جانے تک کی بات ہو رہی تھی۔ یہ بات چیت آگے بڑھتے بڑھتے بہار پر رکی۔ چہرے پر داڑھی اور ماتھے پر تلک لگائے بی جے پی کے ایک رہنما کہتے ہیں کہ پارلیمنٹ کے اسی الیکشن میں نتیش کواپنی اوقات کا اندازہ ہو جائے گا۔ یہ کہے جانے پر کہ آپ کے چھاتی پیٹ

Read more

اتر پردیش میں سیاسی جنگ

دہلی کی گدی کی لڑائی لگاتار تیز ہوتی جارہی ہے۔اقتدار کی جنگ میں کوئی بھی سیاسی پارٹی پیچھے نہیں رہنا چاہتی۔لیڈروں نے فتح حاصل کرنے کے لئے تہذیب و تمدن کو طاق پر رکھ دیا۔ چھوٹے لیڈر ہی نہیں بڑے بڑے لیڈروں کی زبان بھی فضا میں نفرت کا زہر گھول رہی ہے۔ جیت کے لئے شارٹ کٹ اپنایا جا رہا ہے۔ 21 نومبر کو اترپردیش کی زمین پر اسی طرح کے کئی رنگ دیکھنے کو ملے۔ بریلی میں سماج وادی پارٹی کے شیر دھاڑے تو آگرہ میں مودی کانگریس ، سماجوادی پارٹی اور بہو جن سماج پارٹی کو للکارتے رہے۔ یو پی کی لڑائی

Read more

جی ڈی پی گروتھ شرح خطرناک حد تک نیچے

لسہ بھی ملک کے لیے مجموعی گھریلو پیداوار یا گراس ڈومیسٹک پروڈکٹ (جی ڈی پی) پر کیپٹا اس کے معیارِ زندگی کو بتاتا ہے۔ یہ کسی شخص کی ذاتی آمدنی کی پیمائش نہیں ہے، بلکہ اقتصادی تھیوری کے تحت گراس ڈومیسٹک انکم (جی ڈی آئی) پر کیپٹا کے برابر ہوتا ہے اور قومی حساب و کتاب سے منسلک ہے، جو کہ میکرو ایکانومکس کے تحت آتا ہے۔ یہ بڑی تشویش کی بات ہے کہ جی ڈی پی گروتھ (Growth) 2012-13 میں 6 فیصد سے کم ہو کر 2 فیصد تک نیچے آ گیا ہے۔ واضح رہے کہ یہ کمی 1950 سے 1980 تک لائسنس پرمٹ کوٹا (ایل پی کیو) راج میں جی ڈی پی پیداوار شرح 1.5 فیصد کے قریب پہنچ گئی ہے۔ 1980 میں مرارجی دیسائی اور چودھری چرن سنگھ کی حکومتوں کے بعد اندرا گاندھی

Read more

چھتیس گڑھ کے اسمبلی انتخابات : سب سے اہم ایشو نکسلواد انتخابی ایجنڈے سے غائب

پانچ ریاستوں (دہلی، راجستھان، مدھیہ پردیش، چھتیس گڑھ اور میزورم) میں اسمبلی انتخابات کے پیش نظر کئی مہینے پہلے سے سیاسی سرگرمیاں تیز چل رہی تھیں، لیکن الیکشن کمشنر نے جب گزشتہ دنوں اسمبلی انتخابات کی تاریخوں کا اعلان کر کے انتخابی بگل بجایا، تو ان ریاستوں کا سیاسی پارہ اچانک ہی تیزی سے اوپر چڑھ گیا۔ ان ریاستوں میں برسر اقتدار بھارتیہ جنتا پارٹی اور کانگریس کے ساتھ دیگر سیاسی پارٹیاں پورے جوش و خروش کے ساتھ انتخابی میدان میں اترگئی ہیں اوراپنی اپنی ریاست پر قبضہ کرنے کے لیے ایڑی چوٹی کا زور لگا رہی ہیں۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ چھتیس گڑھ کے عوام ریاست کی باگ ڈور کس کے ہاتھوں میں سونپتے ہیں، آئیے دیکھتے ہیں اس رپورٹ میں چھتیس گڑھ کے عوامی رجحانات و امکانات ۔

Read more

اقتصادی بحران سے کیسے نمٹا جائے؟

ملک ایک اقتصادی بحران سے گزر رہا ہے، جس کے کئی اسباب ہیں۔تاہم، حکومت آہستہ روی سے اس کا جواب دے رہی ہے، یعنی کافی دیری سے بہت کم قدم اٹھا رہی ہے۔ وزیر خزانہ نے سونے پر اِمپورٹ ڈیوٹی بڑھا دی ہے اور ملک سے باہر پیسے بھیجنے پر کچھ پابندی لگائی ہے۔ لیکن اس سے مسئلہ حل نہیں ہوگا۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ درآمدات کو سختی سے کم کیا جائے۔ سونے کی درآمدات پر کچھ دنوں کے لیے پوری طرح پابندی لگا دینی چاہیے اور 31 مارچ، 2014 تک تو یہ پابندی ہونی ہی چاہیے۔ اسی طرح غیر ضروری الیکٹرانک اشیاء جیسے موبائل فون کی وجہ سے فارین

Read more