باڈی شیونگ سے پریشان ہوئی تھی یہ اداکارہ، ملا سوم سوٹ نہ پہننے کا مشورہ

Share Article
Vahbiz Dorabjee

 

سوشل میڈیا پر اداکارہ کو بولڈ اور گلیمرس تصاویر کے لئے اکثر ٹرول کیا جاتا ہے۔ لیکن یہ ٹرولنگ صرف سوشل میڈیا تک محدود نہیں ہے۔ گلیمر انڈسٹری میں بھی ایكٹریس کو ٹرولنگ کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

बॉडी शेमिंग से परेशान हुई थी ये एक्ट्रेस, मिली स्विमसूट ना पहनने की सलाह

کئی بار میکرس کے تبصرے اداکارہ کا اعتماد کم کر دیتے ہیں۔ انہیں موٹاپا کے لئے باڈی شیم کیا جاتا ہے۔ ٹی وی اداکارہ واهبج دورابجي نے انکشاف کیا ہے کہ وہ انڈسٹری میں باڈی شیونگ کی شکار رہی ہیں۔

बॉडी शेमिंग से परेशान हुई थी ये एक्ट्रेस, मिली स्विमसूट ना पहनने की सलाह

واهبج نے کہا، “کئی سالوں پہلے ہیلتھ سے منسلک مشکلات کی وجہ سے میرا وزن بڑھا ہوا تھا۔ جب میں اوڈیشن کے لئے جاتی تھی تو میکرس مجھے وزن میں کمی کے لئے کہتے تھے۔ جب کبھی میں سومسوٹ پہنتی تو مجھے کہا جاتا کہ میری جانگھیں ہیوی ہیں تو میں سومسوٹ نہ پهنو۔

बॉडी शेमिंग से परेशान हुई थी ये एक्ट्रेस, मिली स्विमसूट ना पहनने की सलाह

واهبج نے بتایا، ‘ اگر آپ موٹے ہوتے ہیں تو لوگ آپ کو مختلف ناموں سے پکارتے ہیں۔ جو کہ آپ کا اعتماد کم کرتا ہے۔ کئی بار ایسا ہوا جب میں ایسے تبصرے سن کر پریشان ہو جاتی تھی اور اپنا اعتماد کھو دیتی تھی۔

बॉडी शेमिंग से परेशान हुई थी ये एक्ट्रेस, मिली स्विमसूट ना पहनने की सलाह

اداکارہ نے کہا میں نے اس حقیقت کو مان لیا ہے کہ ہر کوئی پتلی نہیں ہو سکتا۔ لیکن ہر کسی عورت کے پاس لڑنے کی طاقت نہیں ہوتی۔ مجھے پتہ ہے فٹ رہنا ضروری ہے، لیکن کبھی کبھی خوش میٹابولجم ویسے رےایكٹ نہیں کرتا جیسا آپ چاہتے ہیں۔ میں روزانہ جم کرتی ہوں۔ میں اپنے آپ سے خوش

बॉडी शेमिंग से परेशान हुई थी ये एक्ट्रेस, मिली स्विमसूट ना पहनने की सलाहہوں۔

ادھر، واهبج پرسنل زندگی کو لے کر زیادہ بحث میں ہیں۔ وہ شوہر ویوین ڈسینا سے الگ ہو گئی ہیں۔اپنے طلاق پر واهبج کا کہنا ہے کہ وہ اور ویوین سے اپنی زندگی میں آگے بڑھ چکے ہیں۔

बॉडी शेमिंग से परेशान हुई थी ये एक्ट्रेस, मिली स्विमसूट ना पहनने की सलाह

ویوین ڈسینا اور واهبج دورابجي نے 2016 میں الگ ہونے کا فیصلہ کیا تھا۔ ان کی شادی 2013 میں ہوئی تھی۔ کبھی ویوین اور واهبج ٹی وی کے سب سے زیادہ لوگ كپل ہوا کرتے تھے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *