کانگریس امیدوار بنائے جانے کے بعد بی جے پی لیڈر نے بیٹے سے ناطہ توڑا

Share Article

bjp-leader

اتر پردیش میں بی جے پی کے ایک لیڈر نے اپنے بیٹے سے صرف اسلئے رشتہ توڑ دیا کیونکہ انہیں کانگریس نے گوتم بودھ نگر سیٹ سے لوک سبھا کا ٹکٹ دیا ہے۔ بی جے پی لیڈر نے کہا کہ اپوزیشن پارٹی نے ان کے خاندان میں سیاسی اختلافات کا فائدہ اٹھایا ہے۔

کانگریس نے ہفتہ کو گوتم بدھ نگر لوک سبھا سیٹ سے بی جے پی ایم ایل سی جے ویر سنگھ کے بیٹے ڈاکٹر اروند سنگھ چوہان کی امیدواری کا اعلان کیا۔ اس سیٹ سے فی الحال مرکزی وزیر مہیش شرما ایم پی ہیں۔سماج وادی پارٹی۔بہوجن سماج پارٹی (ایس پی۔بی ایس پی اتحاد) پہلے ہی ستویر ناگر کو اس سیٹ سے امیدوار بنا چکی ہے۔ بی جے پی نے اب تک اپنے امیدوار کا اعلان نہیں کیا۔

نیوز ایجنسی رائٹر کے مطابق، 17 مارچ کو فیس بک پر لکھے ایک پوسٹ میں ایم ایل سی جے ویر سنگھ نے کہا کہ ان کی بیوی راج کماری چوہان، ان کے تینوں بیٹے، ایک بھتیجا بی جے پی کے تئیں پوری طرحسے وفادار ہیں اور پارٹی اور وزیر اعظم نریندر مودی کی عوامی پالیسیوں کے تئیں پابندعہد ہیں۔

جے ویر سنگھ نے کہا، ’’میرے بیٹے اروند نے دو سال پہلے اپنی شادی کے بعد مختلف نظریات کا اظہار کرنا شروع کر دی اور خاندان سے الگ رہنا شروع کر دیا۔ جے ویر سنگھ نے کہا کہ وہ 2017 میں بی جے پی میں شامل ہوئے تھے۔ اروند نے بی جے پی کی مخالفت کی تھی اور پارٹی کی رکنیت نہیں لی تھی۔


انہوں نے کہا کہ لہذا، انہیں (نوئیڈا بین الاقوامی) یونیورسٹی کے چانسلر کے عہدے سے آزاد کر دیا گیا۔ اب ان کے ساتھ تمام سماجی اور سیاسی رشتے ختم کئے جاتے ہیں۔

جے ویر سنگھ نے کہا، ’’میرے خاندان میں سیاسی اختلافات کا فائدہ اٹھاتے ہوئے کانگریس نے یہ سیاسی قدم اٹھایا اور سیاسی سازش رچی۔کئی بار رابطہ کرنے پر بھی ڈاکٹر اروند سنگھ چوہان سے رابطہ نہیں ہو پایا۔

واضح رہے کہ جے ویر سنگھ برولی اسمبلی سیٹ سے بی ایس پی کے رکن اسمبلی رہے چکے ہیں۔ وہیں جے ویر کی بیوی راج کماری چوہان 2009 سے 2014 تک علی گڑھ سے بی ایس پی کی لوک سبھا رکن رہ چکی ہیں۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *