چائے بیچ رہے ہیں گوشت فروش

Share Article

beef-sellerمظفر نگر: غیر قانونی ذبح خانوں اور گوشت کی دکانوں پر کارروائی کے بعد بے روزگار ہوئے گوشت کاروباریوں نے کنبہ کی پرورش کے لئے دوسرا کام شروع کر دیا ہے۔ بی جے پی حکومت بننے سے پہلے مظفر نگر میں جو لوگ گوشت کا کاروبار کرتے تھے آج چائے اور پرچون کی دکان چلانے کے لئے مجبور ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ گوشت کا کاروبار بند ہونے کے بعد فیملی چلانے کے لئے کچھ تو کرنا پڑے گا۔ مظفر نگر میں رہنے والے نزاکت نے کہا کہ میری گوشت کی دکان کو جبراً بند کر دیا گیا، میرے پاس لائسنس بھی تھا۔ اس کی وجہ سے مجھے چائے بیچنے کو مجبور ہونا پڑا۔ ایک دیگر گوشت فروش کی بھی یہی شکایت ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ انتظامیہ نے جان بوجھ کر ان کی دکان پر تالا لگا دیا۔ گوشت کاروباری رہے کلیم کا کہنا ہے کہ ہماری گوشت کی دکان تھی۔ ہمارے پاس اس کا لائسنس بھی تھا۔ یوگی جی نے گوشت کی دکان بند کرا دی۔ گھر چلانے کے لئے ہم نے پرچون کی دکان کھول لی۔
دلشاد نام کے ایک گاہک بھی گوشت کاروباریوں کے لئے متفکر ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ گوشت دکاندار ان دنوں چائے بیچنے کے لئے مجبور ہیں، ان کے پاس کوئی دیگر متبادل نہیں ہے۔ انہیں اس کام کا کوئی تجربہ بھی نہیں ہے۔ گاہک نے مزید کہا کہ ذبح خانے بند کئے جانے سے کئی پریوار مشکل میں ہیں، کئی کاروباریوں نے اپنا بزنس ہی بدل لیا ہے۔ پوری ریاست میں یوگی حکومت کے اس فیصلہ سے ب ڑی تعداد میں لوگوں پر اثرپڑا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *