خلیج کے سمندری تحفظ پر غور کے لیے بحرین میں کانفرنس ، 65 ممالک شرکت متوقع

Bahrain to host global maritime security summit on Iranian threat. Some 65 countries are expected to participate in the conference …

 

ایران اور امریکہ کے دمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی اور خلیج میں منڈلاتے خطرات کے بادل کو کم کرنے کے لئے بحرین میں 65ممالک سر جوڑ کر بیٹھنے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں۔یہ اطلاع میڈیا رپورٹوں سے موصول ہوئی ہے ۔

 

ایران کے لیے امریکہ کے خصوصی ایلچی ’برائن ہْک‘نے کہا ہے کہ خلیج کے سمندری تحفظ کے حوالے سے جلد ہی ایک کانفرنس بحرین میں منعقد کی جائیگی جس میں 65 ممالک کے مندوبین شرکت کریں گے۔

 

ادھر امریکی جوائنٹ چیف آف اسٹاک کمیٹی کے چیئرمین جنرل جوزف ڈانفرڈ نے گذشتہ ہفتے کہا تھا کہ ان کے ملک نے ایران اور یمن کے باغیوں کی طرف سے عالمی اور علاقائی بحری حدودکے تحفظ کے لیے ایک نیا عالمی عسکری اتحاد تشکیل دینے کا پروگرام بنایا ہے۔ یہ پروگرام ایک ایسے وقت میں وضع کیا گیا ہے جب دوسری جانب خطے کے سمندر میں تیل بردار جہازوں پرحملوں کا الزام ایران اور یمن کے حوثی باغیوںپرعاید کیا جاتا ہے۔جنرل ڈانفرڈ کا کہنا تھا کہ ہم اس وقت اپنے اتحادی ممالک کے ساتھ رابطے میں تاکہ ایک نئے عسکری اتحاد کی تشکیل کے پلان کوعملی شکل دیکر باب المندب اور آبنائے ہرمز میں عالمی جہاز رانی کو تحفظ فراہم کیا جا سکے۔انہوں نے مزید کہا کہ آئندہ دو ہفتوں کیدوران ہمیں اندازہ ہوجائے گا کہ نئے عسکری اتحاد میں شامل ہونے والے ممالک میں کون کتنا پرعزم ہے۔ ہم اپنی افواج کی مدد سے نئے اتحاد کو مضبوط بنا کرخطے میں ایرانی دہشت گردی اور آبی ٹریفک کو لاحق خطرات سے بچائو کا انتظام کریں گے۔ایران کے لیے امریکی مندوب برائن ہک نے گذشتہ ہفتے العربیہ چینل سیب ات کرتے ہوئے کہا تھا کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ ایران پر آخری درجے کا دبائو ڈالنے کی مہم چلانے کے لیے تیار ہیں۔ انہوںنے کہا کہ ہم نے ایرانی رجیم کو تیل کی مد میں حاصل ہونیوالے سالانہ 50 ارب ڈالر کے سرمائے سے محروم کردیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *