قورمہ بریانی کھائو ، اردو کے گن گائو

وسیم راشد
سیاست، سیاست، بابری مسجد پر سیاست، بہار الیکشن میں سیاست، کامن ویلتھ گیمس میں سیاست، کشمیر پر سیاست، سشما سوراج اور مودی کی سیاست، کشمیر پر ارون دھتی رائے کے بیان پر سیاست، یہ ہر جگہ، ہرچیز میں سیاست کا کھیل کیوں ہونے لگا ہے، لیکن اس بار اتنے سارے سیاسی کھیل دیکھ لئے کہ سیاست پر لکھتے ہوئے دل گھبرارہاہے اور بے اختیار یہ خواہش ہورہی ہے کہ اس ہفتے کسی بھی سیاسی عنوان یا سیاسی اکھاڑے کو موضوع نہ بنایا جائے بلکہ اردو زبان کے تعلق سے کچھ لکھا جائے۔ اردو زبان جس کی ہم ایک عرصے سے روٹی کھار

Read more

شفاف الیکشن ہی ہماری اولین ترجیح: ڈاکٹر ایس وائی قریشی

بہار میں اسمبلی انتخابات کا دور دورہ ہے۔تمام پارٹیوں کے امیدوار رائے دہندگان کو لبھانے اور ان کا ووٹ حاصل کرنے کی جی توڑ کوشش کر رہے ہیں۔ امیدوار ووٹروں کو خریدنے سے بھی نہیں چوک رہے ہیں۔ یعنی رات کے اندھیرے میں الیکشن کمیشن کو چکما دے کر لوگ پیسے بانٹ رہے ہیں اور ووٹروں سے حلف لے رہے ہیں کہ وہ اپنا قیمتی ووٹ انہی کو دیں

Read more

…….مرے گلاس کا کچھ رنگ

شاعری کی دنیا میں پدم شری جناب بیکل اتساہی کا نام محتاج تعارف نہیں ہے۔ موصوف یو پی کے ضلع بلرام پور کے رہنے والے ہیں اور گزشتہ نصف صدی سے بھی زائد عرصے سے شاعری کررہے ہیں۔سینئر شاعروں میں ان کا نام سر فہرست ہے۔یہ بتانا دلچسپی سے خالی نہ ہوگا کہ موصوف نے آزادی کی صبح طلوع ہوتے ہوئے بھی دیکھی ہے۔ انہ

Read more

کشمیریوں کو محبت سے سمجھائو کہ ہتھیار نہیں قلم اٹھائو

وسیم راشد
ہر ہفتے نہ جانے کتنے موضوعات ہوتے ہیں جو بے حد اہم ہوتے ہیں اور ہر ایک پر قلم اٹھانے کو جی چاہتا ہے۔ اکثر ایسا ہوتا ہے کہ مذہبی موضوعات پر کچھ اہم حقائق و شواہد مل جاتے ہیں تو لگتا ہے کہ ان پر ہی لکھا جائے اور پوری دیانت داری سے سچائی سامنے لائی جائے، لیکن پھر نہ جانے کہاں سے مذہب سے پہلےسیاست آڑے آجاتی ہے اور صحافی بیدار ہوجاتا ہے۔ بابری مسجد کا ایشو ظاہر ہے ایسا ہے کہ اس پر ابھی بھی بہت کچھ لکھنے کی خواہش ہے۔ ایسے میں سہراب الدین فرضی انکاؤنٹرمعاملہ کے گواہ اعظم خان کا بیان بدلنا، شیو سینا سربراہ بال ٹھاکرے کا ہذیان، اور بہار الیکشن سبھی اہم موضوعات پر لکھنے کی خواہش تھی، لیکن پھر سامنے

Read more

بناتے رہئے کمیٹی، حل نکلے تو ہی بات بنے

وسیم راشد
ہر ہفتہ بے شمار مسائل ہمارے سامنے ہوتے ہیں، جن میں آج کل سب سے زیادہ بلکہ یوں کہہ لیجئے کہ فیشن میں دو ہی مسئلہ چل رہے ہیں، بابری مسجد اور کشمیر۔یہ دونوں ہی مسئلے ایسے ہیں جس میں صحافی ،لیڈر، اداروں کے سربراہ، مفتی، مولوی سبھی اپنی اپنی روٹیاں سینک رہے ہیں۔اشتعال انگیز جملے بھی لکھے جا رہے ہیں۔مسلمانوں کی تعریف بھی کی جا رہی ہے کہ اتنی بڑی نا انصافی کے بعد بھی وہ پر امن ہیں۔محمود مدنی صاحب نے نہ جانے کس جھونک میں یہ بیان دے دیا کہ مسلمانوں کو فیصلہ خوش اسلوبی سے قبول کر لینا چاہئے۔ اس پر

Read more

دیکھتے ہیں کیا تیر مارتے ہیں مشرف

وسیم راشد
اکبر الہ آبادی کا یہ شعر نہ جانے کیوں بار بار ذہن میں آرہا ہے۔
قوم کے غم میں ڈ نر کھاتے ہیں حکام کے ساتھ
رنج لیڈر کو بہت ہے مگر آرام کے ساتھ
ایسے ہی ہمارے ایک پڑوسی ملک کے لیڈر ہیں جناب پرویز مشرف جو لندن میں بیٹھ کر اپنے ملک پاکستان کی سا لمیت وبقا کی باتیں کررہے ہیں جو موجودہ پاکستانی حکومت کو ہر طرح سے

Read more

آستھا کی بھینٹ چڑھ گیا فیصلہ

وسیم راشد
تیس ستمبر دوپہر 3بجے کا وقت ،ہندوستان کے ہر شہر، ہر گلی، ہر محلہ میں سناٹا طاری۔ شہر ویران، گلیاں سنسان، ایسا لگ رہا تھا جیسے کہ خدانخواسہ کوئی بڑا طوفان آکر گزر گیا ہو، مگر یہ طوفان کے پہلے کا سناٹا تھا، جب کہ ہندوستان کی تاریخ کا سب سے بڑا فیصلہ آنے والا تھا۔ سبھی کی آنکھیں اس فیصلے کی منتظر تھیں۔ ہر دل کی دھڑکن اس فیصلے کی آہٹ پر کان لگائے ہوئے تھی۔ ایک خوف، ایک بے چینی کا عالم طاری تھا کہ دیکھئے یہ فیصلہ کس کے حق میں جاتا ہے۔ کسی بڑے فساد کا خوف سب کے دلوں میں سمایا ہوا تھا، اس لیے لوگ اپنے اپنے گھروں میں بند ہوگئے تھے۔ میڈیا نے ایسا ماحول بنادیا تھا کہ جیسے کچھ نہ کچھ ضرور ہوگا اور اسی خوف نے لوگوں کو گھروں میں بند کردیا تھا اور آخر کار 4بجے کے قریب یہ تاریخی فیصلہ آی

Read more

پینتیس ہزار کروڑ میں خریدی گئی بدنامی

وسیم راشد
ایک اردو اخبار کا اداریہ پڑھ رہی تھی، جس میں دولت مشترکہ کھیلوں کے تعلق سے محترمہ شیلا دیکشت کی بے تحاشہ تعریف کی گئی تھی اور ان کی شان میں قصیدے پڑھتے ہوئے یہاں تک کہا گیا کہ شیلا کا نا م تاریخ میں سنہری حرفوں سے لکھا جائے گا کیونکہ انہوں نے دولت مشترکہ کھیلوں کے لیے خون پسینہ ایک کر دیاہے وغیرہ وغیرہ۔ اس کے علاوہ اور بھی بہت سے تعریفی کلمات تھے، پڑھ کر ہنسی بھی آئی اور دکھ بھی ہوا۔ ہنسی اس لیے آئی کہ دو سال سے زیادہ کا عرصہ ہوگیا جب ان کھیلوں کی تیاری شروع ہوئی تھی، لیکن نہ تو اسٹیڈیم صحیح طرح

Read more

کشمیر کے لوگ بھی اپنے ہیں، انہیں ایسے مت مارو

وسیم راشد
گزشتہ انتخابات کے بعد جب عمر عبد اللہ نے کشمیر کا اقتدار سنبھالا تھا، تو کشمیری عوام کوان سے بڑی بڑی امیدیں تھیں۔عوامی توقعات یہ تھیں کہ عمر نئی پیڑھی کے ہیں، جوان ہیں، مرکز ی حکومت میں وزیر رہنے کاتجربہ ان کے پاس ہے اس لیے ان کے کام کرنے کا طریقہ اور انداز کچھ الگ ہوگا۔اقتدار سنبھالنے کے بعد عمر صاحب سے پہلی غلطی تو یہ ہوئی کہ گزشتہ سال شوپیان میں جن دو لڑکیوں کا قتل ہوا تھا، عمر صاحب نے اسی وقت پورے معاملہ کے بارے میں جانے بغیریہ کہہ دیا کہ لڑکیوں کی موت پانی میں ڈوبنے سے ہوئی ہے۔ان کے اس بیان

Read more

کیا خوب ہے ہماری جمہوریت

وسیم راشد
یہ ہیں ہم اور یہ ہے ہماری جمہوریت۔ ہمیں جمہوریت پر فخر ہے، کیونکہ جمہوریت ہمیں اپنی بات کہنے کا حق دیتی ہے۔ اپنے مسائل پر آواز اٹھانے کی اجازت دیتی ہے اور ساتھ ہی انسان کی شکل میں ہماری عزت بھی کرتی ہے، لیکن جمہوریت برقرار رہے اس کے لیے ہم کیا کرتے ہیں؟ہم صرف باتیں کرتے ہیں، کبھی کبھی گلا پھاڑتے ہیں اور تفریح کے لیے کبھی کبھی جلوس بھی نکال دیتے ہیں۔ ممبئی جیسے حادثات پر ہم باہر نکلتے ہیں اور تلاش کرتے ہیں کہ ٹی وی کیمرے کدھر ہیں۔ ہو سکتا ہے کہ اگر کیمرے والے نہ رہیں تو ہم سڑک پر ہی نہ آئیں۔کیا ہم کیمرے پ

Read more