شولا پور میں پہلی اسلامی بینک کاری سروس مضبوط ہوگی جمہوریت

سودپر مبنی قرض کے بوجھ تلے ڈوبی دنیا میں گزشتہ دنوں ریاست مہاراشٹر کے شولاپور میں کوآپریٹو ، مارکیٹنگ اور صنعت کے وزیر سبھاش دیشمکھ کے لوک منگل کوآپریٹو بینک کی باشری شاخ میںحکومت کی منظور شدہ پہلی اسلامی بینک کاری سروس شروع ہونے کی خبر آئی تو ملک بھر میںبلا تفریق مذہب و ملت اس کا خیر مقدم کیا گیا کیونکہ یہاںسے قرض لینے والے کسی بھی شخص کو نہیں دیناہوگا سود۔ آئیے دیکھتے ہیں کہ سود پر مبنی قرض کا نظام کیا قہر ڈھارہا ہے اور بی جے پی رہنما کے ذریعہ لی گئی اس پیش رفت کے اس ملک میںآگے بڑھنے کے کیا امکانات ہیں۔

Read more

سنگور کے کسانوں کو انصاف ملا مگر نندی گرام اب بھی محروم

توقع ہے کہ سپریم کورٹ کا یہ فیصلہ ان سیاسی پارٹیوں کے لئے سبق ہوگا جو کہ اپنے فکری اصولوں سے ہٹ کر عوام مخالف قدم اٹھاتی ہیں اور اقتدار کے نشے میں عوام کے مفادات ہی کو فراموش اور نظر انداز کردیتی ہیں۔ ظاہر سی بات ہے کہ ان کے اس عمل کو نہ عوام پسند کرتے ہیں اور نہ ہی عدالت اور وہ ہر جگہ پر مسترد کردیئے جاتے ہیں۔ سنگور کے بعد نندی گرام انصاف کا منتظر ہے۔

Read more

کالا ہانڈی کا دردناک واقعہ انسانیت کی موت ہے

انسانیت سوز واقعات دنیا میں کہیں بھی ہوں،شرمناک ہیں۔ایسے واقعات درحقیقت یہ بتاتے ہیں کہ انسانیت مررہی ہے۔ ماضی قریب میں خانہ جنگی کے نتیجے میں شام میں ایلن کردی کی لاش و دیگر معصوم بچوں کی حالت زار کی جو تصاویر منظر عام پر آئیں تو ہر شخص بلا لحاظ مذہب و ملت دہل اٹھا۔ اسے تو یہ کہہ کر نمٹنے کی کوشش کی گئی کہ معاملہ خانہ جنگی کا ہے اور وہاں بحرانی کیفیت ہے ،مگر 24اگست 2016کو ریاست اڑیسہ کے کالا ہاندی میں جو کچھ ہوا ہے ،اس کی تو کوئی توضیح کی ہی نہیں جاسکتی ہے۔

Read more

قائدین کو دلچسپی نہیں بنیادی مسلم مسائل سے

یہ تلخ حقیقت ہے کہ ہندوستان میں مسلمانوں کی اجتماعی قیادت کا فقدان ہے۔تنظیموں اور اداروں کے جو قائدین ہیں وہ مسلک اور مکتبہ فکر کی بنیاد پر اپنے اپنے پیروکاروں کے رہنما ہیں۔ان کا ملک بھر میں پھیلے ہوئے ہندوستانی مسلمانوں سے نہ کوئی ربط ہے اور نہ ہی کوئی سروکار۔ یہی وجہ ہے کہ عام مسلمانوں کے بنیادی مسائل میں وہ کوئی اہم کردار ادا نہیں کرپاتے ہیں۔انہی امور کا یہاں جائزہ لیا جارہا ہے۔

Read more

نیا قومی تعلیمی پالیسی ڈرافٹ سیکولر اور عوامی امنگوں کا ترجمان نہیں

بی جے پی قیادت والی این ڈی اے حکومت چلی ہے ملک کو فرنگیوں اور دیگر اثرات سے آزاد نئی قومی تعلیمی پالیسی دینے ۔ مگر ڈرافٹ کی تفصیلات پر نظر ڈالتے ہی یہ محسوس ہوجاتا ہے کہ اس کی اصل منشا گنگا جمنا تہذ یب والے سیکرلر اور عوامی امنگوں کے ترجمان نظریوںکو ختم کرکے ہندوستان کو ایک مخصوص ایک رخی نظریہ کی طرف لے جانا ہے۔ عام عوام خصوصاً مسلمان، دیگر اقلیتیں اورکمزور طبقات اس ڈرافٹ سے صرف غیر مطمئن ہی نہیں ،خوفزدہ بھی ہیں۔ اس کا اندازہ ان کے اندر پائی جانے والی بے چینی اور خوف و ہراس سے ہوتا ہے۔ اس رپورٹ میںان ہی باتوں کا تجزیہ پیش کیا گیا ہے اور مشورے دیے گئے ہیں۔ آئیے، دیکھتے ہیںکہ کس طرح موجودہ شکل میں یہ ڈرافٹ ملک کے عوام کو منظور نہیں ہے۔

Read more

مسلمانوں کے مسائل، نوجوانوں کی گرفتاریاں، بے شمار سوالات مگر جواب کسی کے پاس نہیں

ایک کرم فرما سے مسلمانوںکے مسائل پر لگاتار بات چیت ہوتی رہتی ہے۔ بڑے جانور کی ذبیحہ پر روک لگانے کے لئے مہاراشٹر کے فیصلے پر وہ محترم میری رائے جاننا چاہتے تھے۔ میں نے تلخ لہجہ میں ان سے کہا دیکھئے پھر الجھا دیا مسلمانوں کو ایک نئے مسئلہ میں۔ ارے مسلمانوں کو ان مسائل سے اوپر اٹھنے دو ۔ان کو اب بابری مسجد، گجرات فساد، ہاشم پورہ، ملیانہ سے اوپر اٹھ کر سوچنے دو ان کی نئی نسلوں کو اب صرف اور صرف تعلیم چاہئے، مسلم نوجوانوں کوجامعہ ملیہ، علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے اقلیتی کردار سے زیادہ ان اداروں میں داخلے لینے اور اپنی علمی و تخلیقی صلاحیتوں کو بڑھانے کی ضرورت ہے۔ بڑے جانوروں کی ذبیحہ ہو یا چھوٹے

Read more

ایک کسان کی خودکشی سبھی پارٹیوں کی چاندی

سیاست ایک گندا کھیل ہے۔پر کیوں؟ہمارے ذہن میں ہمیشہ یہی سوال گونجتا رہا جب تک کہ ہم شعور کی اس حد تک نہیں پہنچ گئے جب تک خود تھوڑے بہت سیاسی دائوں پینچ کھیلنے نہیں آگئے۔لیکن ہماری سیاست میں تو معصومانہ سی ایک خواہش اچھی سی نوکری اور چھوٹے موٹے عہدے تک محدود رہی۔سیاست دانوں کی عقل اور ان کے سیاسی شعور کو ہمارا دماغ کہاں پہنچ سکتا تھا بھلا۔ کیونکہ کوئی ایسا موقع ،کوئی ایسا حادثہ ،کوئی ایسا سانحہ ہمیں یاد نہیں آتا کہ ہمارے سیاست دانوں نے جس کو کیش نہیں کیا ہو۔پھر وہ ایک کسان کی موت پر کیوں خاموش بیٹھتے ۔آخر گجیندر کو کس نے مارا یہ سوال پوچھنا ایک حماقت ہی تو ہے۔

Read more

اردو دشمنی کا نیا طریقۂ کارآپ تو ایسے نہ تھے

اقلیتوں سے کئے گئے تمام وعدوں کو پورا کرنے میں مرکزی حکومت مصروف ہے، یہ بیان اقلیتی امور کی وزیر ڈاکٹر نجمہ ہپت اللہ کا ہے۔ہوسکتاہے نجمہ ہپت اللہ صحیح کہہ رہی ہوں لیکن ہم ان کے اس بیان کو کیسے تسلیم کریں جبکہ اقلیتوں کے ساتھ ان کی مادری زبان کو لے کر ہی ناانصافی کی جارہی ہے۔ ایک ہی دن دو متضاد خبروں پر ہماری نظر پڑتی ہے تو نجمہ ہپت اللہ کے اس بیان میں صرف سیاسی شعبدہ بازی اور و عدے وعید کے سوا کچھ نظر نہیں آتاہے کیونکہ اس دن یہ بھی خبر ملتی ہے کہ نئے داخلہ فارم سے تیسری زبان کا آپشن ختم کردیا گیا ہے۔ ظاہر ہے اس خبر سے اردو والوں کو سخت دھکا لگا ۔مجھے یاد ہے جب میں بحیثیت اردو استاد کے درس و تدریس کے فرائض انجام دیتی

Read more

جشن ریختہ: اردو کا ایسا جشن نہ دیکھا نہ سنا

انڈیا انٹر نیشنل سینٹر کا وسیع و عریض سبزہ زار، ہلکی ہلکی سی پھوار پڑتی ہوئی، ٹھنڈی ٹھنڈی بھیگی ہوا سے درخت و پتے جھومتے ہوئے، روشنیاں، میوزک، خوبصورت ساز و آواز کا سنگم اور پورا فائونٹین لان اردو کے متوالوں سے کچھا کھچ بھرا ہوا۔یہ منظر جشن ریختہ کا ہے ۔ریختہ ایک ایسے اردو کے متوالے، اردو زبان کے دیوانے کی کاوش ہے جس نے اردو زبان و ادب کی ترویج و ترقی اور اردو کو غیر اردو داںحضرات تک پہنچانے کے لئے جنون کی تمام حدوں کو چھولیا ہے۔ سنجیو صراف ایک ایسے ہی اردو کے عاشق کا نام ہے جس نے اپنی ریختہ فائونڈیشن کے ذریعہ اردو کی بقاء اور اردو کو عروج دینے میں منفرد کام کیا ہے۔

Read more
Page 10 of 35« First...89101112...2030...Last »