کرکٹ، اشتہار اور فضیحت

راجیش ایس کمار
جب کھلاڑیوں پر کامیابی اور پیسے کا نشہ طاری ہوتا ہے تو پھر اخلاقیات تک دائو پر لگ جاتی ہے۔ اس دوران یہ بھی دھیان نہیں رہتا ہے کہ کیا صحیح ہے اور کیا غلط۔ نظر آتا ہے تو صرف پیسہ ۔ اس کے لیے بھلے ہی کسی کو بے عزت کرنا پڑے یا پھر کسی کو گالی ہی کیوں نہ دینی پڑے۔ حال ہی میں دو شراب کمپنیوں کے اشتہار کے بعد ہندوستانی ٹیم کے دو کھلاڑیوں میں پیدا ہوا تنازعہ کچھ یہی کہانی بیان کرتا ہے۔ ابھی تک ٹیم انڈیا کے کپتان مہندر سنگھ دھونی اور ساتھی کھلاڑی ہربھجن سنگھ قریبی دوستوں کے طور پر جانے جاتے تھے، لیکن حال ہی میں ایک اشتہار نے ان دونوں کے درمیان خلیج پیدا کر دی تھی جس کی وجہ سے یہ ایک دوسرے کے خلاف قانونی جنگ پر آ

Read more

ڈوپنگ کا جال: صرف کھلاڑی اور کوچ قصوروار نہیں

راجیش ایس کمار
ہندوستان کے زیادہ تر کھیل پہلے سے ہی کرکٹ کے مایاجال میں پھنس کر خود اپنے وجود کے لیے ترس رہے ہیں، ایسے میں ڈوپنگ کے بڑھتے معاملوں نے ان ابھرتے ہوئے کھیلوں اور کھلاڑیوں کو حاشیے پرڈالنے کا کام کیا ہے، جو کسی طرح کرکٹ کے بازار میں اپنے طلائی تمغوں کی بدولت اپنی موجودگی درج کرا رہے تھے۔ جس طرح طلائی تمغے جیتنے والے کھلاڑی ڈوپنگ ٹیسٹ میں ایک ایک کرکے ناکام ہوتے جا رہے ہیں، اس سے نہ صرف ان کھلاڑیوں کی صلاحیت پر سوالیہ نشان لگ رہا ہے ، بلکہ اس سے ملک اور متعلقہ کھیلوں پر بھی ایک بد

Read more

تمیزداروں کی بدتمیزی

راجیش ایس کمار
کرکٹ کو ملک کے عوام مذہب مانتے ہیں تو تھیوری میں اسے جینٹل مین گیم کا درجہ دیا گیا ہے۔ کچھ لوگ اسے جاگیرداروں کا کھیل بتاتے ہیں، جس میں دو جاگیردار کھیلتے ہیں اور باقی کھلاڑی مزدور ی کرتے ہیں، لیکن اب کرکٹ کو لے کر

Read more

آئی پی ایل میں دادا کی واپسی چہ معنی دارد؟

راجیش کمار
بنگال ٹائیگر، دادا، بابو موشائے اور سورو گانگولی، یہ تمام نام اس شخص کے ہیں، جس کا ایک دور میں ہندوستانی کرکٹ پر ایسا دبدباقائم تھا کہ لوگ بولتے تھے یہ ہندوستانی کرکٹ ٹیم کا اب تک کا سب سے کامیاب اور شاندار کپتان ہے، لیکن یہ طلوع ہوتا ہوا سورج اتنی جلدی غروب ہوگا، ایسا کسی نے نہیں سوچا تھا۔ عرش سے فرش اور فرش سے عرش تک کے سفر کے صحیح معنی دادا سے بہتر کوئی اور نہیں سمجھ سکتا ہے۔کپتانی سے ہٹنے کے بعد فرش تک پہنچنا اور کمنٹری کرنے سے لے کر آئی پی ایل 4کے آخری دور میں بطور نائب کپتان واپسی کرنا، پھر سے عرش تک پہنچنے کی جدوجہد کی عجیب و غریب داستان ہے۔کل تک ی

Read more

آئی پی ایل: کھلاڑیوں کو گمراہ کرنے کی کوشش

گزشتہکچھ سالوں میں اگر ہندوستان کی شبیہ بین الاقوامی سطح پر مثبت انداز میں ابھری ہے تو اس میں کرکٹ کا بھی قابل قدر اشتراک رہا ہے۔ طویل عرصہ بعد یہ دیکھنے کو مل رہا ہے کہ ہندوستانی کھلاڑی بیرونی ممالک میں نہیں بلکہ اپنے ہی ملک میں کرکٹ کے ذریعہ پیسہ اور بین الاقوامی شہرت حاصل کر رہے ہیں۔ صرف اتنا ہی نہیں، ہم کبھی کرکٹ کے سرتاج کہے جانے والے ممالک کے کھلاڑیوں کی نیلامی بھی کر رہے ہیں۔ آج حالت یہ ہے کہ کرکٹ بالواسطہ طور پر قومی کھیل بن چکا ہے اور یہ سب ہوا ہے آئی پی ایل کی وجہ سے،لیکن زیادتی تو کسی بھی چیز کی اچھی نہیں ہوتی۔ آئی پی ایل کے ساتھ بھی یہی ہوا۔ مودی اور کلماڈی کا حشر تو دنیا دیکھ ہی چکی ہے۔ ان دونوں کے گھوٹالوں کو دیکھتے ہوئے یہ ہونالازمی بھی تھا، لیکن اس بات پر کوئی دھیان نہیں دے رہا ہے کہ پیسہ، گلیمرکی چکا چوندھ سے لبریز

Read more

کھلاڑیوں سے بدسلوکی کی کا گھنائونا چہرہ

راجیش کمار
ہمارے ملک میں کھیل کو کسی مذہب سے کم تسلیم نہیں کیا جاتاہے۔ کھلاڑیوں کی مقبولیت لوگوں کے سر چڑھ کر بولتی ہے۔سچن جیسے کھلاڑی کو کرکٹ کے بھگوان کا درجہ حاصل ہے اور ان کے نام سے مہاراشٹر میں باقاعدہ ایک مندر کی تعمیر تک کروائی گئی ہے ، لیکن حقیقت کی تہہ تک جائیں تو کھلاڑیوں کے تحفظ کو لے کر ہمیشہ شک و شبہات کے بادل منڈ

Read more

منافع کی لڑائی میں الجھا کرکٹ

راجیش کمار
ہمارے ملک میں ہونے والے بیشتر تنازعات میں ایک بات مشترکہ ہوتی ہے، وہ یہ کہ ہمیں تنازعہ کی جو وجہ بتائی جاتی ہے، دراصل وہ وجہ ہوتی ہی نہیں ہے۔ اگر ہم تنازعات کو گہرائی سے دیکھیں تو پتہ چلتا ہے کہ کہانی توکچھ اور ہی ہے۔ایسا ہی کچھ معاملہ آئی پی ایل میں سری لنکا کے کھلاڑیوں کی واپسی کو لے کر پیدا ہوئے تنازعہ میں دیکھاجا رہا ہے۔غور طلب ہے کہ انڈین پریمئر لیگ (آئی پی ایل) کے چوتھے ایڈیشن میں حصہ لے رہے سری لنکائی کرکٹرز کو سری لنکا کی وزارت کھیل نے جلد ہی ملک واپس لوٹنے کا فرمان جاری کر دیا ہے اور اس کی وجہ مئی میں ہونے والے دورۂ انگلینڈ کے لئے ٹیم کی تیاری بتائی جا رہی ہے، لیکن معاملہ ا

Read more

پیسہ، گلیمر اور فٹا فٹ کرکٹ

راجیش کمار
عالمی کپ کی جیت کا خمار اترا بھی نہیں کہ آئی پی ایل نے دستک دے دی ہے۔ایک بار پھر پورا ملک کرکٹ کے خمار میں ڈوبے گا۔ لیکن اس بار مقابلہ تھوڑا الگ ہوگا۔آئی پی ایل4-میں کرکٹ کے سورمااپنے ملک کے لیے نہیں بلکہ اپنی ریاستی ٹیموں کے لیے کھیلیں گے۔ مثلاً کوئی کنگس الیون تو کوئی سپر کنگس کی دعویداری کے لیے میدان میں اترے گا۔کرکٹ کی اس جنگ میں ایک ہی ٹیم میں کئی ملکوں کے سورما ایک ساتھ کھیلتے نظر آئیں گے۔اس بار کے آئی پی ایل کی نیلامی کی بات ک

Read more

آئی پی ایل سیزن-4 کا تڑکا

راجیش کمار
دو اپریل گزر گیا، عالمی کم تو اختتام کو پہنچا، لیکن کرکٹ کا جنون ابھی باقی ہے، میرے دوست۔ جی ہاں، 2اپریل کو تو صرف عالمی کپ کا اختتام ہوا ہے، کرکٹ کے جنون کا نہیں۔ جب آئی پی ایل کا چوتھا سیزن آپ کا انتظار کر رہا ہے۔گلیمر اور کھیل کا یہ مسالہ 8اپریل ، 2011سے شروع ہو کر 28مئی تک چلے گا۔ اس شمارہ میں ہم آپ کو اس سیزن کی تمام ٹیموں اور شیڈول کی مکمل معلومات فراہم کرا رہے ہیں۔
اس مرتبہ آئی پی ایل -4میں بہت کچھ بدلنے والا ہے۔لہٰذا اگر ناظرین انہیں پرانی آٹھ ٹیموں کو دیکھ کر بوریت محسوس کر رہے ہوں تو انہیں دو نئی ٹیمیں د

Read more
Page 1 of 3123