فرضی انکائونٹر: قصوروار پولس والوں کو پھانسی ہو

ڈا کٹر قمر تبریز
ابھی حال ہی میں راجستھان میں دارا سنگھ کے فرضی انکاؤنٹر کے معاملہ میں ملک کی عدالت عظمیٰ، سپریم کورٹ نے بڑے سخت لہجے کا استعمال کرتے ہوئے کہا ہے کہ فرضی انکاؤنٹر میں ملوث پولس والوں کو پھانسی پر لٹکا دیا جانا چاہیے۔ دارا سنگھ ایک مبینہ ڈاکو تھا، جسے راجستھان کی پولس نے 23 اکتوبر، 2006 کو ایک فرضی انکاؤنٹر کے دوران گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا۔ گزشتہ 8 اگست کو اس معاملے کی سماعت کرتے ہوئے جسٹس مارکنڈے کاٹجو اور جسٹس چندرمولی کمار پرساد کی سپریم کورٹ کی ایک بنچ نے واضح الفاظ میں کہا کہ پولس کو قانون کا محافظ تصور کیا

Read more

ہندوستانی اقلیتوں کی سلامتی کی فکر اب امریکہ کرے گا

ڈاکٹر قمر تبریز
ایسا لگتا ہے کہ اب بیرونی ممالک کی حکومتوں کو بھی ہندوستانی مسلمانوں کی حالت زارِ پر ترس آنے لگا ہے۔ شاید اسی لیے امریکی پارلیمنٹ میں ایک بل پیش کرکے اس بات کی تجویز پیش کی گئی ہے کہ دنیا کے دیگر ممالک سمیت ہندوستان میں بھی مذہبی اقلیتوں کی مذہبی آزادی کو فروغ دینے کے مقصد سے ایک خصوصی ایلچی کا تقرر کیا جائے۔ یہ بات اچانک امریکی حکمرانوں کے ذہن میں کیسے آئی، اس پر غور کرنے کی ضرورت ہے، کیوں کہ امریکہ اس بہانے سے کچھ اور کھیل تو نہیں کھیلنا چاہتا؟ اس کے علاوہ یہ امر بھی غور طلب ہے کہ، کیا ہندوستانی حکومت ملک کے اندر امریکہ کے کسی ایسے ایلچی کو اپنا کام کرنے کی اجازت دے گی جو یہاں

Read more

کیا حاجیوں کے مسائل کبھی حل ہوں گے ؟

ڈاکٹر قمرتبریز
اسلام کے پانچ بنیادی فرائض میں سے ایک حج بھی ہے۔ ایک مسلمان، چاہے وہ دنیا کے کسی بھی خطے میں رہتا ہو، اس بات کی پوری کوشش کرتا ہے کہ پوری زندگی میں کم از کم اسے ایک بار اللہ کے مقدس گھر، خانہ کعبہ اور اللہ کے پیارے رسول حضرت محمد صلے اللہ علیہ وسلم کی آخری آرامگاہ مسجد نبوی کی زیارت کا موقع حاصل ہو جائے۔ اللہ نے جن صاحب نصاب پر حج کو فرض کیا ہے، وہ تو حج بیت اللہ کے لیے کوشش کرتے ہی ہیں، لیکن وہ شخص جو صاحب نصاب نہیں ہے، اور نہ ہی اس کے پاس زیادہ مال و دولت ہے، وہ بھی اس بات کا متمنی رہتا ہے کہ کہیں سے اس کے پاس اتنے پیسے آ جائیں کہ وہ حج یا عمرہ میں لگنے والے سفر کے خرچ کو برداشت کر لے، اور اس کو اللہ اور اس کے پیارے رسولؐ کے گھر کی زیارت کا موقع ن

Read more

آئی ایس آئی کا لبرل نیٹ ورک

ڈاکٹر قمر تبریز
کشمیر میں پیدا ہونے والا ایک شخص امریکہ میں رہتے ہوئے آئی ایس آئی کے تعاون سے ہند مخالف سرگرمیوں میں ملوث رہتا ہے اور کسی کو کانوں کان خبر نہیں ہوتی۔ وہ بین الاقوامی سیمینار کراتا ہے، ہندوستان کے نامور صحافیوں اور دانشوروں کو اس میں مدعو کرتا ہے لیکن کسی کو ذرہ برابر شک بھی نہیں ہوتا۔ وہ کشمیری کاز کو آگے بڑھانے میں اپنی پوری جی جان لگا دیتا ہے، امریکی قانون سازوں کو گاہے بگاہے فنڈ مہیا کراتا ہے، کشمیر کے بارے میں امریکی موقف کو متاثر کرنے کی کوشش کرتا ہے، تب بھی کسی کو اس پر شک نہیں ہوتا۔ لیکن اچانک جب ایف بی آئی کے ذریعے اسے حراست میں لیا جاتا ہے اور امریکہ کی ایک عدالت میں اس کے خلاف ایک کرمنل کیس، 43 صفحات پر مبنی حلف نامہ کے ساتھ داخل کیا جاتا ہے، تو سب کے کان کھڑے ہو

Read more

اسکالرشپ اسکیم:اقلیتی فرقہ کے طلباء کو کتنا فائدہ پہنچ رہا ہے

ڈاکٹر قمر تبریز
ہمارے ملک کے اندر بنیادی تعلیم کو بنیادی حق قرار دیا گیا ہے، لیکن افسوس کی بات یہ ہے کہ ملک کے اندر قانون تو بنا دیے جاتے ہیں ، انہیں ٹھیک سے لاگو نہیں کیا جاتا۔ نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ قانون کے رہتے ہوئے ملک کے عام شہری اس سے کوئی فائدہ نہیں حاصل کر پاتے۔ تعلیم کا بھی کچھ یہی حال ہے۔ یو پی اے حکومت نے 4 اگست 2009 کو پارلیمنٹ میں حق تعلیم بل پاس کیا تھا جس کے بعد ہندوستانی آئین کی دفعہ 21A کے تحت ملک کے 6 سے 14 سال کی عمر کے

Read more