حکومت بہار نکسل ازم پر روک لگا رہی ہے یا اسے بڑھا وا دے رہی ہے؟

ششی شیکھر؍ راجیش ایس کمار
ترقی اور نکسل ازم کے درمیان کیا تعلق ہو سکتا ہے؟ سرکاری جواب تو یہی ہوتا ہے کہ ماؤنواز ترقی کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں، لیکن ’’چوتھی دنیا‘‘ کی تحقیقات سے ایک تعجب خیز سچائی کا انکشاف ہوتاہے۔ یوں تو ملک کی تقریباً 12 ریاستیں اورتقریباً 200 اضلاع ماؤنوازوں کی گرفت میں ہیں۔ بہار کے بھی زیادہ تر اضلاع ماؤنوازوں کی زد میں ہیں۔ اس کے باوجودجس طرح سے گزشتہ 6-7 سالوں میں نتیش کمار کے وزیراعلیٰ رہتے ہوئے بہار میں نکسلی تشدد کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے، اس سے ماؤنوازوں سے متعلق سرکاری بیانات کی معتبریت پر سوال کھڑے ہوتے ہیں، مثلاً اگر ماؤنواز ترقی کے دشمن ہیں ت

Read more

بارہواں پنچ سالہ منصوبہ :کیا عوامی امنگوں کا ترجمان ہوگا ؟

عبد الباری مسعود
پلاننگ کمیشن آف انڈیا یا منصوبہ بندی کمیشن نے با رہویں پنج سالہ منصوبہ (2012-17) کا ا پروچ پیپر ( منصوبہ کا تعارفی خاکہ ) پیش کردیا ہے جس کا بنیادی مقصد تیز رفتار، مزید اشتمالی (Inclusive) اور پائیدار ترقی و نمو بیان کیا گیا ۔ آئندہ منصوبہ کو حتمی شکل دینے کے سلسلہ میں وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ کی سربراہی میں کمیشن کی ایک خصوصی میٹنگ میں تعارفی خاکہ پیش کیا گیا۔یہ دراصل گیارہویں پنج سالہ منصو بہ کا عکس ہی معلوم ہوتا ہے کیونکہ اس میں بھی منصوبہ کا مرکزی نکتہ وہی زیادہ سے زیادہ اقتصادی شر ح نمو کا حصول ہے ۔ خود وزیر اعظم نے ( جو کمیشن کے چیئر مین بھی ہوتے ہیں) اپنی اختتامی تقر

Read more

بارش کا نظام قرآن اور سائنس کے مطابق ہے

احمد نعمانی
بارش کے پانی میں خدا نے اپنا معجزہ شامل کر رکھا ہے۔ اس کا تذکرہ تو اللہ نے اپنے کلام پاک میں ساڑھے چودہ سو سال قبل کردیا تھا، جب کہ سائنسدانوں نے اس بات کی تحقیق کرنے کے بعد موجودہ وقت میں اشارہ کیا ہے۔ میں نے بذات خود سائنسدانوں سے بات کی اور ان سب نے بہ یک زبان قرآن کے اس معجزہ کی اپنے سائنسی انداز میں تصدیق کی۔ 2009 میں انڈیا اسلامک کلچرل سینٹر کے وی آئی پی روم میں چند سائنسداں کانفرنس سے فراغت کے لمحہ میں یکجا تھے، یہ تمام سائنسداں ہندوستان کا سب سے اہم ادارہ جو ’’کھیتی کسانی‘‘ سے متعلق تحقیق کرتا رہتا ہے، اس سے وابستہ تھے۔ یہ ’’پوسا انسٹی ٹیوٹ‘‘ نئی دہلی کے پروفیسران حضرات تھے۔ ان سے میں نے خود سوال کیا۔ مقصد یہ تھا کہ کتابوں میں جو تذکرہ کیا گیا ہے اور سائنسی حقائق سے جوڑا گیا ہے، کیا وہ اطلاع درست ہے، میں نے سوال کیا کہ یہ کہا جا

Read more

اب تبدیلی کرنے کی باری ممتا کی ہے

راجیش ایس کمار
عوام نے تو اقتدار بدل دیا ہے، اب تبدیلی کرنے کی باری ممتا بنرجی کی ہے۔ اکیلے دم پر تقریباً دو تہائی سیٹیں جیتنے کے بعد بھی اگر ممتا بنرجی کانگریس کو حکومت میں شامل ہونے کی دعوت دیتی ہیں تو اسے صرف ان کی دلجوئی یا اتحادی رسم نبھانے کی بات نہیں مانا جانا چاہیے۔ ویسے بھی سیاست میں دلجوئی جیسے لفظ کے لیے کوئی جگہ نہیں ہوتی۔ مغربی بنگال میں سالوں تک اپوزیشن کا کردار ادا کرنے والی ممتا بنرجی کو یہ اچھی طرح معلوم ہے کہ عوام نے جو تبدیلی کی ہے، وہ محض34سال پرانے اقتدار کی وجہ سے ہی نہیں کی ہے۔ عوام نے یہ تبدیلی اس امید کے ساتھ بھی کی ہے کہ ممتا اب ان کی زندگی اور مغربی بن

Read more

میرے زمانہ کی دلی

سید ضمیر حسن دہلوی
دلی کے سیلانی جوڑے بڑے مشہور تھے۔ یہاں کے لوگوں کو سیر سپاٹے بڑے عزیز تھے۔ ایمانداری سے کمانا اور کھانا اڑانا دلی والوں کی زندگی کا بنیادی اصول تھا۔ کرخندار جب تک اپنی کمائی کا پیسہ پیسہ خرچ نہ کردیتے تھے کارخانے کا رخ نہیں کرتے تھے۔ عرس، فاتحہ، میلے ٹھیلے، بسنت، پھول والوں کی سیر، سلطان جی کی سترہویں، اوکھلے اور محلدار خاں کی ٹر سب شاہی زمانے کی طرز پر کل تک برقرار تھے۔ سڑکوں پر موٹریں تو کم دکھائی دیتی تھیں تانگے اور ریڑھ

Read more