اورنگ زیب کی شہادت کا بدلہ لینے کیلئے سعودی عرب سے لوٹے 50دوست ،پہنیں گے وردی 

Share Article
Aurangzeb
جموں وکشمیرکے سالانی گاؤں میں گذشتہ14 جون کو دہشت گردوں نے اورنگ زیب کا قتل کردیا تھا۔عیدکی چھٹی منانے گھرجارہے اورنگ زیب کودہشت گردوں نے پہلے اغواکیاتھا۔اس کے بعد گولیوں سے چھلنی جوان کی لاش پلوامہ ضلع کے گوسّوعلاقے میں ملی تھی۔اس وقت غم سے نڈھال اورنگ زیب کے والد نے خود ہی موت کا بدلہ لینے کا اعلان کیا تھا۔ اب خبرہے کہ شہید اورنگ زیب کے گاوں سلانی میں ان کے تقریبا 50 دوست شہادت کا بدلینے کے لئے جمع ہوگئے ہیں بتایاجارہاہے کہ وہ خلیجی ممالک سے اچھی خاصی تنخواہ والی نوکریاں چھوڑ کرلوٹے ہیں اور ان سب کا مقصد اورنگ زیب کی موت کا بدلہ لینا ہے۔شہیداورنگ زیب کے دوستوں کا صرف ایک ہی مقصد ہے کہ فوج یا پولیس میں بھرتی ہوکر اپنے دوست کی شہادت کا بدلہ لیں۔ سعودی عرب سے نوکری چھوڑ کر آنا آسان نہیں تھا ، نوکری چھوڑنے میں تمام طرح کی مشکلات بھی آئیں ، لیکن اورنگ زیب کی موت کی خبر ملتے ہی انہوں نے نوکری چھوڑ کر بدلہ لینے کا فیصلہ کرلیا تھا اور اب وہی کرنے کیلئے واپس پہنچ چکے ہیں۔
محمد کرامت اور محمد تاج نے بتایا کہ انہوں نے اورنگ زیب کی موت کی خبر ملتے ہی نوکری چھوڑنے کا فیصلہ کرلیا تھا۔ کرامت نے کہا کہ سعودی عرب میں ایسے اچانک نوکری چھوڑنے کی اجازت نہیں ہے ، لیکن ہم نے کسی طرح سے یہ کرلیا۔ ہمارا ایک ہی مقصد ہے اور وہ اورنگ زیب کی موت کا بدلہ لینا ہے۔فوج میں نوکری کررہے اورنگ زیب کے بھائی محمد قاسم نے کہا کہ ان کے بھائی کی موت کیلئے دہشت گرد نہیں بلکہ دہشت گرد تنظیموں کو یہ کام کرنے کی ہدایت دینیو الے ذمہ دار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فوج کی وارننگ اور کارروائی کے بعد بھی دہشت گرد بے خوف ہیں۔
خیال رہے کہ دہشت گردوں نے 14 جون کو اورنگ زیب کا اغوا کرلیا تھا ، اسی دن پلوامہ میں ان کی گولیوں سے چھلنی لاش برآمد ہوئی تھی۔ وہ عید کی چھٹی پر گھر جارہے تھے۔ دہشت گردوں نے اورنگ زیب کا مرنے سے پہلے کا ویڈیو بھی جاری کیا تھا۔ اورنگ زیب کے والد حنیف فوج سے ریٹائرڈ ہیں۔
یادرہے کہ دہشت گردوں نے ہندوستانی جوان اورنگ زیب کارمضان کے پاک مہینے میں اغواکرکے ان کاقتل کیاتھا۔ ادھررمضان میں ہی دہشت گردوں نے افطارمیں جارہے رائزنگ کشمیرکے ایڈیٹرشجاعت بخاری کاگولی مارکرقتل کردیا۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *