اے ایم یونے داخلہ ٹسٹ میں مذہبی بنیادوں پر امتیاز برتے جانے کے الزام کی سختی سے تردید کی

Share Article
amu
علی گڑھ مسلم یونیورسٹی (اے ایم یو) نے آج اس الزام کی سختی سے تردید کی ہے کہ ستیہ ویر سنگھ نام کے ایک امیدوار کو مذہبی بنیادوں پر ایل ایل ایم داخلہ ٹسٹ کا ایڈمٹ کارڈدینے سے منع کردیا گیا۔ کنٹرولر امتحانات مسٹر مجیب اللہ زبیری نے کہاکہ یہ الزام سراسر بے بنیاد اور حقیقت سے کوسوں دور ہے۔ انھوں نے کہاکہ مذکورہ امیدوار سمیت 16؍امیدواروں کو ایل ایل ایم داخلہ ٹسٹ کا ایڈمٹ کارڈ اس وجہ سے نہیں دیا گیا کیوں کہ اہلیتی امتحان یعنی ایل ایل بی؍بی اے ایل ایل بی میں ان کے مطلوبہ 55؍فیصد نمبر نہیں تھے۔
شعبۂ قانون کے سربراہ پروفیسر جاوید طالب کے مطابق داخلہ کے خواہشمند مسٹر ستیہ ویر سنگھ کے ایل ایل بی میں 51.64فیصد نمبر ہیں جو مطلوبہ لیاقت سے کم ہے۔ انھوں نے کہا کہ 15؍دیگر امیدواروں کو بھی نااہل پایا گیاتھااور سبھی نااہل امیدواروں کی فہرست داخلہ ٹسٹ سے پہلے ہی 21؍جون کو یونیورسٹی کی ویب سائٹ پر شعبۂ قانون کے صفحہ پر اپلوڈ کردی گئی تھی جنھیں ایڈمٹ کارڈ لینے کے لئے شعبۂ قانون میں آنے کی ضرورت نہیں تھی۔
یہ بات قابل ذکر ہے کہ اے ایم یو کے ایڈمیشن گائیڈ میں صفحہ ایف 1پر ایل ایل ایم میں داخلہ کی اہلیت کے کالم میں واضح طور سے لکھا ہوا ہے کہ امیدوار کے لئے یہ لازم ہے کہ اس نے اہلیتی امتحان یعنی ایل ایل بی یا بی اے ایل ایل بی میں 55؍فیصد نمبر حاصل کئے ہوں۔ پروفیسر جاوید طالب نے کہاکہ مسٹر ستیہ ویر سنگھ کا الزام پوری طرح جھوٹ ہے اور پراگندہ ذہنیت کا غماز ہے ۔ انھوں نے کہاکہ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کسی طالب علم کے ساتھ مذہب، ذات، رنگ، نسل یا علاقہ کی بنیاد پر کوئی امتیاز نہیں کرتی اور صرف میرٹ کو پیش نظر رکھا جاتا ہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *