آسام این آر سی پر امت شاہ نے کہا ’ہم میں ہمت ہے اس لئے ہم نے اسے نافذ کیا‘

Share Article
amit-shah
نیشنل رجسٹرآف سٹیزن (این آرسی) پرہنگامہ جاری ہے۔ سڑک سے لیکر پارلیمنٹ تک اپوزیشن ہنگامہ کررہے ہیں۔ آسام میں نیشنل رجسٹرآف سٹیزن (این آر سی ) سے 40 لاکھ لوگوں کے نکالے جانے کے معاملہ پر گذشتہ روز کی طرح آج بھی راجیہ سبھا میں اپوزیشن کا زبردست ہنگامہ ہوا جس کے بعد ایوان کی کارروائی بارہ بجے تک ملتوی کردی گئی۔ راجیہ سبھا میں ترنمول کانگریس ارکان کے ہنگامہ کے مدنظر ایوان کا اجلاس شروع ہونے کے تقریبا دس منٹ بعد ہی ایوان کی کارروائی ملتوی کر دی گئی۔
این آر سی کے مسئلہ پر راجیہ سبھا میں بولتے ہوئے بی جے پی صدر امت شاہ نے کہا کہ آپ کے ( کانگریس) وزیر اعظم راجیو گاندھی نے آسام معاہدہ پر دستخط کئے تھے۔ یہی معاہدہ این آر سی کی روح تھی۔ آپ اپنے وزیر اعظم کا فیصلہ نافذ نہیں کر پائے، آپ میں ہمت نہیں، ہم میں ہمت ہے۔ اس لئے ہم نے اسے نافذ کیا۔امت شاہ نے اپوزیشن پارٹیوں سے سوال کرتے ہوئے کہا کہ میں پوچھنا چاہتا ہوں کہ یہ 40 لاکھ بنگلہ دیشی کس کے ہیں، کس کو بچانا چاہتے ہیں آپ؟ آپ بنگلہ دیشی دراندازوں کو بچانا چاہتے ہیں۔
ادھر لوک سبھا میں آج روہنگیا پناہ گزینوں کا معاملہ اٹھا جس پر جواب دیتے ہوئے داخلی امور کے وزیر مملکت کرن رجیجو نے کہا کہ روہنگیا پناہ گزیں نہیں ہیں بلکہ وہ غیر قانونی طریقہ سے ہندوستان آئے ہیں اور انہیں ملک پر کبھی بوجھ بننے نہیں دیا جائے گا۔
دوسری طرف این آرسی مسئلے پر تلنگانہ سے رکن اسمبلی راجاسنگھ نے کہا کہ یہ توملک کے سامنے بڑاسوال ہے کہ آخراس معاملے کا حل کیسے ہونا چاہئے۔انہوں نے کہاکہ اپوزیشن پارٹیوں کواس معاملے پرسیاست کرنے کی سوجھ رہی ہے۔لیکن بہتریہ ہے کہ گھسپیٹ کے مسائل کوسلجھانے کیلئے ہندوستان کی سرحد پررہ رہے بنگلہ دیشی درندازیوں کوگولی ماردینا چاہئے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *