اکشے کمار نے ’بھارت کے ویر‘ ایپ-ویب سائٹ کے ذریعے پلوامہ شہیدوں کے اہل خانہ کیلئے جمع کئے 7 کروڑ روپے

Share Article

 

اکشے کمار کے ایپ اور ویب سائٹ’بھارت کے ویر‘ کے ذریعے شہیدوں کے اہل خانہ کو مدد پہنچائی جا سکتی ہے۔ایک طرف جہاں حملے کے بعد عطیہ کا صرف اعلان ہی ہو رہا ہے، وہیں میڈیا ذرائع سے ملی معلومات کے مطابق ’بھارت کے ویر‘نے صرف ڈیڑھ دن میں ہی 7 کروڑ روپے جمع کر بھی لئے ہیں۔

Image result for akshay kumar help pulwama

 

ممبئی: پلوامہ دہشت گردانہ حملے میں شہید ہوئے سی آر پی ایف جوانوں کو آج پورے احترام کے ساتھ آخری الوداعی دے دی گئی۔ نم آنکھوں سے شہیدوں کی قربانی کو یاد کیا گیا، مگر اب پورے ملک کی سب سے بڑی ذمہ داری ان شہیدوں کے خاندانوں کو سہارا دینے کی ہے،تاکہ جو ہمارے لیے اپنی جان پر کھیل گئے، ان کے بچوں کے مستقبل سے کوئی سمجھوتہ نہ ہو لہٰذا کئی لوگوں نے مالی مدد کرنے کا اعلان بھی کیا ہے،تووہیں کئی لوگ راحت فنڈ بنا کران جوانوں کے اہل خانہ کی مدد کرنے کی اپیل کر رہے ہیں، لیکن ان میں عطیہ دینے میں بہت سے لوگوں کے ذہنوں میں یہ ہچکچاہٹ ہوتی ہے کہ کیا واقعی عطیہ کی گئی رقم ان ضرروتمندوں تک پہنچ پائے گی؟اس مسئلہ کو حل کرنے کے لئے بالی ووڈ سپر اسٹار اکشے کمار سامنے آئے ہیں۔

 

اکشے کمار کے ایپ اور ویب سائٹ’بھارت کے ویر‘ کے ذریعے شہیدوں کے اہل خانہ کو مدد پہنچائی جا سکتی ہے۔ایک طرف جہاں حملے کے بعد عطیہ کا صرف اعلان ہی ہو رہا ہے، وہیں میڈیا ذرائع سے ملی معلومات کے مطابق ’بھارت کے ویر‘نے صرف ڈیڑھ دن میں ہی 7 کروڑ روپے جمع کر بھی لئے ہیں۔ اکشے کمار نے خود 5کروڑ روپے کی امدادی رقم دی ہے۔نیشنل ایوارڈ سے اعزاز یافتہ اکشے کمار ان دنوں لندن میں ہیں اور 17 فروری کو انڈیا واپس آنے والے ہیں پھر وہ ڈونیشن کریں گے۔

 

 

اکشے کمار نے ’بھارت کے ویر‘کی بنیاد اپریل 2017 میں رکھی تھی تب انہوں نے کہا تھا کہ حکومت کے ساتھ مل کر وہ شہیدوں کے خاندانوں کی مدد کے لئے اس ایپ اور ویب سائٹ کو لانچ کر رہیں۔اس کے ذریعہ عطیہ دینے والے براہ راست ڈونیشن ضرورتمند خاندانوں تک پہنچا سکتے ہیں۔اسٹیٹ بینک آف انڈیا کی مدد سے یہ پیسہ بغیر کسی ٹرانسفر فیس کے ٹرانسفر ہوںگے، ’چوتھی دنیا‘ بھی آپ سب سے اپیل کرتا ہے کہ بھارت کے بہادر کے پلوامہ میں مارے گئے جوانوں کے خاندانوں کی زیادہ سے زیادہ مدد کیجئے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *