ذاکر موسی کے خاتمے کے بعد عبدالحمید ’انصارغزوۃ الہند‘ کا نیا چیف بنا

Share Article

 

انصار غزوۃ الہند (اے جی ایچ) تنظیم کے کمانڈر اور دہشت گرد ذاکر موسیٰ کی 23 مئی کو ایک تصادم کے دوران موت کے بعد عبدالحمیدللہاری عرف ہارون عباس کو تنظیم کا نیا چیف بنایا گیا ہے۔ اگرچہ للہاری کو دہشت گرد تنظیم اے جی ایچ کمانڈر بنانے کا اعلان پہلے ہی کیاجا چکا تھا لیکن تنظیم نے اس کی تصدیق جمعہ کو کی ہے۔

 

حزب مجاہدین سے منسلک رہے کمانڈر ذاکر موسی کو 27 جولائی 2017 کو انصار غزوۃ الہند کا چیف بنایا گیا تھا۔ انصار غزوۃ الہند دہشت گرد تنظیم القاعدہ کی ہی ایک شاخ کا نام ہے۔ اس تنظیم کا کام بھارت میں القاعدہ کی سرگرمیاں پھیلانا ہے۔
کشمیر میں القاعدہ کی شناخت بنے اے جی ایچ کے ترجمان ابو عبیدہ نے جمعہ کو ایک آڈیو پیغام جاری کرکے حمید للہاری کو انصار غزوۃ الہند (اے جی ایچ) کشمیر کا نیا کمانڈر بنائے جانے کا انکشاف کیا ہے۔ اس کے ساتھ ہی اس نے غازی ابراہیم خالد کو ڈپٹی چیف بنانے کا اعلان بھی کیا ہے۔ بھارتی سیکورٹی ایجنسیوں نے اس آڈیو میں جاری پیغام کی سچائی کی جانچ شروع کر دی ہے ۔

 

ذرائع کے مطابق عبدالحمید للہاری کاک پورا پلوامہ کا رہائشی ہے جس کا مکمل نام عبدالحمید لون ہے۔ وہ مئی 2016 سے دہشت گردانہ سرگرمیوں میں سرگرم ہے۔ اسے سال 2016 میں ابو دجانہ نے لشکر طیبہ دہشت گرد تنظیم میں شامل کیا تھا۔ اس سے قبل وہ لشکر کا اوور گراؤنڈ ورکر تھا۔ سال 2017 کے آخر میں للہاری ذاکر موسی کے گروہ کا حصہ بن گیا تھا۔ سکیورٹی فورسز نے للہاری پر سات لاکھ کا انعام کا اعلان کر رکھا ہے۔قابل ذکر ہے کہ جموں و کشمیر میں یکم جولائی سے امرناتھ یاترا شروع ہونے والی ہے۔

 

اس دوران پورے ڈیڑھ ماہ تک جموں سے لے کر امرناتھ تک عقیدت مندوں کی حفاظت کی ذمہ داری سیکورٹی فورسز کے ہاتھوں میں ہے۔ اس حساس موقع پر انصارغزوۃالہند کے ذریعہ نئے کمانڈر کا اعلان سیکورٹی فورسز کے لئے مشکل ہو سکتا ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *