سیٹوں میں الجھا AAP- کانگریس کا اتحاد، جانیے کس یو ٹرن کا اشارہ کر رہے ہیں راہل گاندھی

Share Article

 

دارالحکومت دہلی میں بھی کافی دنوں سے عام آدمی پارٹی اور کانگریس کے اتحاد ہونے کے قیاس ہیں، لیکن دونوں طرف سے کوئی بڑی کوشش نہیں ہوئی. پیر کو کانگریس صدر راہل گاندھی کے ٹویٹس کے بعد ایک بار پھر اتحاد کی امید جاگی ہے، اگرچہ اروند کیجریوال نے بھی اس پر جوابی حملہ کیا ہے.

 

 

بھارتیہ جنتا پارٹی اور نریندر مودی کے فتح رتھ کو روکنے کے لئے ملک بھر میں اتحاد کی قواعد جھولی میں ہیں. دارالحکومت دہلی میں بھی کافی دنوں سے عام آدمی پارٹی اور کانگریس کے اتحاد ہونے کے قیاس ہیں، لیکن دونوں طرف سے کوئی بڑی کوشش نہیں ہوئی. پیر کو کانگریس صدر راہل گاندھی کے ٹویٹس کے بعد ایک بار پھر اتحاد کی امید جاگی ہے، اگرچہ اروند کیجریوال نے بھی اس پر جوابی حملہ کیا ہے.

 

 

احمد پٹیل نے بھی صاف دیا پیغام
کانگریس کے سینئر لیڈر احمد پٹیل نے پیر کو کہا ان کی پارٹی دہلی میں عام آدمی پارٹی (آپ) کے ساتھ 4-3 فارمولے کے تال میل والے اپنے موقف پر قائم ہے اور اب فیصلہ آپ کو کرنا ہے.
پٹیل نے ٹویٹ کر کہا، ‘ہم واضح طور پر کہنا چاہتے ہیں. ہماری دلی یونٹ کی مخالفت کے باوجود کانگریس صدر نے دہلی میں آپ کے ساتھ رفتار کا فارمولہ نکالنے کے لئے مقامی لیڈروں کو منایا. لیکن آپ نے ہریانہ میں بھی نشستوں کی مانگ پر زور دیا. ”
انہوں نے کہا، ‘ہمارا موقف واضح ہے، اب گیند ان پالے میں ہے۔

 

 

راہل-کیجریوال میں ہوئی تھی ٹوئٹر وار
بتا دیں کہ اس سے پہلے کانگریس صدر راہل گاندھی نے ٹویٹ کر کہا تھا کہ ان کی پارٹی دہلی میں آپ کے ساتھ اتحاد کرنے کو تیار ہے، لیکن اروند کیجریوال دوبارہ يوٹرن لے رہے ہیں.
راہل گاندھی کے جواب میں دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے بھی ٹویٹ کیا. انہوں نے کہا کہ کون سا U- ٹرن؟ ابھی تو بات چیت چل رہی تھی. خود ٹویٹ دکھاتا ہے کہ اتحاد آپ کی خواہش نہیں صرف دکھاوا ہے، مجھے افسوس ہے آپ بیان بازی کر رہے ہیں.
آج ملک کو مودی شاہ کے خطرے سے محفوظ بچانا اہم ہے. بدقسمتی کہ آپ UP اور دیگر ریاستوں میں بھی مودی مخالف ووٹ بانٹ کر مودی جی کی مدد کر رہے ہیں. دہلی کی سات لوک سبھا سیٹوں پر 12 مئی کو پولنگ ہونا ہے.

 

 

کس یو ٹرن کی طرف ہے اشارہ؟
آپ کو بتا دیں کہ عام آدمی پارٹی کی جانب سے مسلسل کانگریس کے ساتھ اتحاد کی کوششیں کی جا رہی تھیں. اروند کیجریوال کئی مواقع پر کہہ چکے ہیں کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کو شکست دینے کے لئے وہ کسی بھی پارٹی کے ساتھ اتحاد کرنے کو تیار ہیں.کیجریوال اور AAP کی جانب سے پہلے مودی شاہ کی جوڑی کو روکنے کے لئے کسی بھی حد تک جانے کی بات کہی جا رہی تھی، لیکن بات سیٹوں پر اٹک گئی. کانگریس چاہ رہی ہے کہ اتحاد صرف دہلی میں ہو، تو وہیں AAP اس بات پر اڑ گئی ہے کہ وہ دہلی کے ساتھ ساتھ پنجاب اور ہریانہ میں بھی ساتھ میں انتخاب لڑنا چاہتی ہے. ہریانہ میں اکٹھا کرنے میں مصروف عام آدمی پارٹی (آپ) نے ہریانہ میں جننايك جنتا پارٹی (جےجےپي) کو تین لوک سبھا سیٹوں پر انتخاب لڑنے کا اختیار دیا ہے.
ذرائع نے بتایا کہ آپ نے جےجےپي کو گروگرام یا فرید آباد، انبالہ یا کرنال اور روہتک یا پانی پت میں سے ایک ایک سیٹ منتخب کرنے کا اختیار دیا ہے. انہوں نے بتایا کہ امیدواروں کے ناموں کا اعلان چند روز میں کیا جائے گا. اس سلسلے میں دونوں پارٹیوں کے ارکان والی کور کمیٹی فیصلہ کرے گی.
آپ کو بتا دیں کہ ہریانہ میں دونوں پارٹیوں نے جمعہ کو ریاست کی 10 سیٹوں پر ساتھ الیکشن لڑنے کے لئے جمع کا اعلان کیا تھا. جےجےپي، ہریانہ کے سابق وزیر اعلی اوم پرکاش چوٹالہ کے پوتے دشینت چوٹالہ کی پارٹی ہے.

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *