نومنتخب سینٹرل وقف کونسل کی میٹنگ 

Share Article
Central-Waqf-Council
مرکزی اقلیتی امور کے وزیرمختارعباس نقوی کی صدارت میں پیرکوسینٹرل وقف کونسل کی نومنتخب گورننگ کونسل کی میٹنگ منعقدہوئی۔کونسل کی میٹنگ کی شروعات سے قبل پلوامہ میں ہوئے حملے میں شہید جوانوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے دو منٹ کی خاموشی اختیار کی گئی۔نقوی نے گورننگ کونسل کی میٹنگ کو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پہلی مرتبہ ملک بھر میں وقف اراضیوں کا استعمال سماج کو مضبوط بنانے اور روزگار مہیا کرانے کے لیے کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ مرکز کی مودی حکومت’’ پردھان منتری جن وکاس کاریکرم ‘‘کے تحت ملک بھر کے ان پسماندہ علاقوں کے اقلیتی طبقوں اور خاص طور سے لڑکیوں کی تعلیم ،روزگاراور ہنرمندی کے فروغ کے لیے ہرممکن کوشش میں لگی ہوئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ308اضلاع میں اقلیتوں اور خاص طور سے لڑکیوں کی تعلیم اورانہیں ہنرمند بنانے کے لیے جنگی پیمانے پر کام چل رہاہے۔وزیراعظم نریندر مودی نے اقلیتوں کے لیے منتخب100اضلاع کی تعداد بڑھا کر 308اضلاع کردی ہے۔
مختار عباس نقوی نے بتایا کہ وقف اراضیوں کو تحفظ دینے کے سلسلے میں جسٹس ریٹائرڈ ذکی اللہ خان کی قیادت میں بنی پانچ رکنی کمیٹی نے اپنی رپورٹ وزارت کو سونپ دی ہے۔ آج کی میٹنگ میں اس رپورٹ پر بھی تبادلۂ خیال کیا گیا ہے۔ نقوی نے کہا کہ کمیٹی کی رپورٹ کی سفارشیں وقف اراضیوں کے صحیح استعمال اور طویل عرصہ سے جھگڑے میں پھنسی اراضیوں کو باہر نکالنے کے لیے وقف ضابطوں کو آسان اور مضبوطی دے گی۔
مرکزی حکومت اس کمیٹی کی سفارشوں کا جائزہ لینے کے بعد صحیح قدم اٹھائے گی۔ انہوں نے کہا کہ سینٹرل وقف کونسل وقف ریکارڈ کے ڈیجیٹلائزیشن کے لیے ریاستی وقف بورڈوں کو مالی مدد فراہم کررہی ہے تاکہ سبھی وقف بورڈ وقف اراضیوں کے ڈیجیٹلائزیشن کا کام مقررہ وقت پر پورا کرسکیں۔ 90فیصد وقف اراضیوں کا ڈیجیٹلائزیشن کا کام تقریباً مکمل ہوچکا ہے اور باقی اراضیوں کو جلد ہی ڈیجیٹلائزڈ کردیا جائے گا۔ نقوی نے بتایا کہ گزشتہ ساڑھے چار سالوں میں کئی قسم کی اسکالر شپ کے پروگرام سے غریب، کمزور ،اقلیتی سماج سے تعلق رکھنے والے تقریباً3کروڑ 83لاکھ طلباء کو فائدہ ہوا ہے جس میں60فیصد طالبات شامل ہیں۔ نقوی نے کہا کہ کئی قسم کے روزگار اور ہنرمندی کے پروگرام کے تحت چھ لاکھ سے زیادہ نوجوانوں کو روزگار یا روزگار کے مواقع فراہم کرائے گئے ہیں۔ اس میں تقریباً 50فیصد لڑکیاں شامل ہیں۔ہنر ہاٹ کے ذریعہ سے گزشتہ دو سالوں میں دولاکھ سے زیادہ اقلیتی طبقہ کے دستکاروں اور ہنرمندوں کو روزگاریا روزگار کے مواقع فراہم کرائے گئے ہیں۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *