مچھلی اور چکن کے شوقین کو جھٹکے پر جھٹکا

Share Article
fish-and-chicken
آندھرا پردیش کی مچھلیوں کا ذائقہ تو بہار والے سالوں سال سے لے رہے ہیں۔ لیکن حال ہی کی جانچ رپورٹ بتاتی ہے کہ آندر پردیش سے جو مچھلیاں بہار آ رہی ہیں اس میں کینسر کے عنصر ہیں ۔رپورٹ کے مطابق ان مچھلیوں کو محفوظ بہار بھیجنے کے لئے جو لیپ لگایا جاتا ہے اس میں فرملین جیسے خطرناک عنصر پائے گئے ہیں ۔یہاں یہ جاننا ضروری ہے کہ آندھرا پردیش سے زیادہ تر مچھلیاں بہار آتی ہیں۔محکمہ کے ذرائع بتاتے ہیں کہ عام آدمی کی صحت کو دھیان میں رکھتے ہوئے سرکار نے ان مچھلیوں کی بہار میں فروخت کرنے پر روک لگاسکتی ہے۔غور طلب ہے کہ بہار میں ہر سال 50-60ہزارٹن مچھلیاں باہر سے آتی ہیں جس میں سب سے زیادہ تعداد میں آندھراپردیش سے آتی ہیں۔سرکار اگر مچھلیوں پر روک لگاتی ہے تو گوشت کھانے والے لوگوں کو جھٹکا لگے گا کیونکہ برڈ فلو کے خطرے کی وجہ سے چکن کھانے پر روک لگی ہوئی ہی ہے۔ایسے میں کھانے کے شوقین کو صرف ریڈمیٹ کا سہارا بچ جائیگا لیکن سبھی لوگ ریڈ گوشت کو کھانا صحت کی وجہ سے پسند نہیں کرتے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *