تیل پیداوار میں تعطل

تیل پیداکرنے والے چاہتے ہیں کہ تیل کی قیمت مزید بڑھے۔ یہ قیمت جتنی بڑھے گی ،ان کا اتنا ہی فائدہ بڑھے گا۔ حالانکہ اس سے خریدار ملکوں کو تیل مہنگا ملے گا اور اس کا اثر دوسرے اشیائے ضروریہ پر بھی پڑیں گے۔
چھ دسمبر کو اوپیک کے 15 رکن ممالک کے نمائندگان نے آسٹریا کے دارالحکومت ویانا میں سالانہ اجلاس میں شرکت کی، جہاں انھیں آئندہ چھ ماہ کے لیے تیل کی پیداوار کی سطح طے کرنی تھی۔یہ توقع کی جا رہی تھی کہ اوپیک کے سب سے طاقتور ملک سعودی عرب کی خواہش پر پیداوار میں کمی سے قیمتیں بڑھیں گی، جو نومبر کے آخر تک گذشتہ ایک سال کے دوران کم ترین سطح پر پہنچ چکی ہیں۔ لیکن فی الحال ایسا کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔
سعودی عرب کا کہنا ہے کہ پیداوار میں کمی کی ضرورت ہے کیونکہ اسے خدشہ ہے کہ دوسری صورت میں قیمتیں آئندہ سال مزید کم ہو سکتی ہیں کیونکہ متوقع طور پر تیل کی طلب میں کمی ہوگی۔لیکن سعودی عرب کی خواہش کے باوجود اب تک اس پر کوئی حتمی فیصلہ نہیں ہو سکا ہے اور تیل کی پیداوار کم کرنے کی بات تعطل میں ہے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *