فلم ’محلہ اسی‘:پنڈت کے کردارمیں سنی دیول

sunny-deol-in-mohalla-assi
ویسے سنی دیول کا ڈھائی کلو کاہاتھ ، تاریخ پرتاریخ والا ڈائیلاگ بھول پانا مشکل ہے اورسنی کا ’یارو اویارو‘ والا ڈانس۔ سنی دیول اپنے وقت کے سپراسٹاررہے۔ ایکشن سے لیکر رومانس اورکامیڈی تک انہوں نے اداکاری کرکے خودکوثابت کیا۔ حالانکہ انکی پہچان بنی غصے اورایکشن ہیروکے طورپر ،جوکہیں نہ کہیں بے حد شرمیلابھی ہے۔
بہرکیف طویل عرصے سے سینسربورڈ میں لٹکی متنازعہ فلم ’محلہ اسی ‘ کا ٹریلر آخرکار ریلیز ہوچکاہے۔ ڈھائی منٹ کے ٹریلر میں جہاں بنارس (وارانسی) کوایک اندازمیں دکھایا گیاہے، وہیں ٹریلر میں ہی اداکاروں کو 9بار گالی دیتے یاڈبل معنیٰ سے بات ہوئے دکھایاگیاہے۔ تین بار توسنی دیول خود گالی دیتے نظرآرہے ہیں۔ حالانکہ ٹریلر کی شروعات میں ’’گنگا میں ہمارا وشواس اب بھی اٹل ہے‘‘ اور’’ ہم بھارت کو پکنک اسپاٹ اورگنگا کو سوئمنگ پل بننے نہیں دیں گے‘‘ جیسے ڈائیلاگ بھی ہیں۔ فلم کوڈائریکٹ چندرپرکاش دویدی نے کیاہے۔
’محلہ اسی‘وارانسی کے جانے مانے ادیب ڈاکٹر کاشی ناتھ سنگھ کی 2004میں آئی کتاب کاشی کا اسی پرمبنی ہے۔ کتاب میں رام جنم بھومی اورمنڈل کمیشن کے دوران کے واقعات کو سیاسی اندازسے لکھا گیا ہے۔فلم میں سنی دیول ، ساکشی تنور کے علاوہ مکیش تیواری ، سوربھ شوکل اورروی کشن اہم کردارمیں ہیں۔
سنی دیول فلم میں بنارس کے اسی گھاٹ میں رہنے والے پنڈت کے کردار میں ہیں جوسنسکرت کا ٹیچر بھی ہے۔11دسمبر2017کو دہلی ہائی کورٹ نے ایک کٹ اور’اے‘ سرٹیفکٹ کے ساتھ سی بی ایف سی کوفلم ریلزکرنے کا حکم دیاتھا۔ سنی دیول اسے 21ستمبر 2018کوریلیز کرنے والے تھے، لیکن اب یہ 16 نومبر2018کوریلیز ہورہی ہے۔
میڈیا پورٹس کے مطابق، دہلی ہائی کورٹ کے ذریعہ اسٹے لگائے جانے کے بعد یہ انٹرنیٹ پر 11 اگست 2015کو لیک ہوگئی تھی۔ فلم کے ڈائریکٹر اورسنی کے خلاف وارانسی میں گالیوں کا استعمال کرنے کیلئے ایک ایف آئی آر بھی درج ہوئی تھی۔ 8اپریل 2016کو سی بی ایف سی نے بھی فلم کو بین کردیاتھا۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *