بدلتے موسم میں ساگ کا مزہ،جانیں خاص فائدے

saag
ٹھنڈ نے دستک دے دی ہے اوراس موسم میں کھانے پینے کابہت دھیان رکھنا چاہئے ۔کیونکہ بدلتے موسم میں تھوڑی سی لاپرواہی سے آپ کوسردی -زکام اوربخار ہوسکتاہے۔ اس موسم میں دھوپ نہ نکلنے کے باعث خون کے مواصلات صحیح سے نہیں پاتاجس کے باعث ساگ کھانے کی صلاح دی جاتی ہے۔آئیے جانتے ہیں اس کے فائدے۔
سرسوں کاساگ
سرسوں کا ساگ کھانے میں بہت مزیدار ہوتاہی ہے اس کے ساتھ ہی سردیوں میں اس کا استعمال کرنے سے ہماری صحت بھی اچھی رہتی ہے۔ سرسوں کے ساگ میں کیلوری، فیٹ ، کاربوہائی ٹریٹ، فائبر، شوگر، پوٹیشیم، وٹامن اے، سی ، ڈی ، بی 12، میگنیشیم، آئرن اورکیلشیم کی مقداربھرپورہوتی ہے۔یہ اینٹی آکسیڈینٹس کی موجودگی کے باعث نہ صرف جسم سے زہریلامادوں کودورکرتے ہیں بلکہ بیماری کے خلاف مزاحمت کو بھی بڑھاتے ہیں۔
چنے کا ساگ
چنے کا ساگ کھانے میں غذائیت سے بھرپور اورمزیدارہوتاہے۔ چنے کے ساگ میں کاربوہائی ٹریٹ ، پروٹین، فائبر، کیلشیم، آئرن ووٹامن پائے جاتے ہیں۔ یہ قبض، ڈائبٹیز، پلیا(جونڈس)وغیرہ امراض میں بہت فائدے مند ہوتاہے۔ چنے کاساگ جسم میں پروٹین کی فراہمی کرتاہے۔
بتھوے کا ساگ
بتھوا بہت دواؤں کی خصوصیات سے بھرپور ہوتا ہے۔اس میں بہت سے وٹامن، کیلشیم، فاسفورس اورپوٹیشیم پائے جاتے ہیں۔بتھوا باقاعدگی سے کھانے سے گردے میں پتھری ہونے کا خطرہ کافی کم ہوجاتاہے۔ گیس، پیٹ میں درد اورقبض کی شکایت بھی دورہوجاتی ہے۔
میتھی کا ساگ
سردی کاموسم آتے ہی سبزی بازار میں میتھی خوب دکھنے لگتی ہے۔ میتھی میں پروٹین، فائبر، وٹامن سی، نیاسین، پوٹیشیم، آئرن موجودہوتے ہیں۔ اس میں فولک اسڈ، میگنیشیم، سوڈیم، جنک، کاپروغیرہ بھی ملتے ہیں جوجسم کیلئے بیحدضروری ہیں۔میتھی پیٹ کیلئے کافی اچھی ہوتی ہے۔ ساتھ ہی یہ ہائی بی پی ، شوگر، اپچ وغیرہ بیماریوں میں میتھی کا استعمال فائدے مند ہوتاہے۔
چولائی کا ساگ
چولائی میں کاربوہائیٹریٹ ، پروٹین، کیلشیم اوروٹامن اے، منرل اورآئرن زیادہ مقدارمیں پائے جاتے ہیں۔ چولائی روزانہ کھانے سے جسم میں ہونے والی وٹامن کی کمی کوکافی حدتک پورا کیا جاسکتاہے۔ یہ کف اورپت کاخاتمہ کرتاہے جس سے خون کی خرابی دورہوتے ہیں۔
نوٹ: یہ مضمون قارئین کی معلومات میں اضافے کے لیے شائع کیا گیا ہے۔مضمون میں دی گئی کسی بھی تجویز پر عمل کرنے سے قبل معالج سے مشورہ و ہدایت ضرور حاصل کریں۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *