آلوک ناتھ پرجنسی زیادتی کا الزام

aloknath
فلموں اورٹی وی دنیاکے ’سنسکاری بابو‘ یعنی بالی ووڈ اداکار آلوک ناتھ پرجنسی زیادتی کا الزام لگاہے۔رائٹر اورفلم میکر ونیتا نندا نے آلوک ناتھ پرجنسی زیادتی کا الزام لگاتے ہوئے ایک فیس بک پوسٹ میں پورے معاملے کوپبلک کے سامنے کھول کررکھ دیا ہے۔اس پوسٹ میں ونیتانے تفصیل سے بتایاہے کہ کیسے آلوک ناتھ نے 1994میں مشہورشو’تارا‘ کے دوران ان کے ساتھ ریپ کیا۔حالانکہ اس پوری پوسٹ میں ونیتانے آلوک ناتھ کاکہیں نام نہیں لیاہے۔ نندا نے اس کی شناخت کی طرف اشارہ کرتے ہوئے ’سنسکاری‘ لفظ کا استعمال کیا ہے۔ اس سے لگتا ہے کہ ان کا الزام مشہور اداکار آلوک ناتھ پر ہے۔
نندا نے اس کے بعد اپنے ساتھ ہوئی زبردستی کا ذکر کیا ہے۔ انہوں نے لکھا کہ ملزم اداکار نے نشے کی حالت میں ان کے ساتھ بے رحمی سے عصمت دری کی۔ اس حادثہ نے انہیں اندر تک تکلیف پہنچائی۔ بعد کے سال ان پر کافی بھاری گزرے۔ انہیں کام کے لئے جدوجہد کرنی پڑی۔ تاہم اب وہ ان سب سے آگے بڑھ چکی ہیں۔ حیرت کی بات تو یہ ہے کہ جو اداکار سوالوں کے گھیرے میں ہیں وہ فلم اور ٹی وی انڈسٹری میں سب سے مہذب کے طور پر جانے جاتے ہیں۔
نندا نے ’ہیش ٹیگ می ٹو‘ #MeToo مہم کے تحت پوسٹ لکھ کرہلچل مچادی ہے۔فیس بک پوسٹ میں نندا نے لکھاکہ ’اس کی وائف میری بیسٹ فرینڈ تھی۔ ہم دونوں ایک دوسرے کے گھرکے پاس ہی رہتے تھے اوردوست بھی کامن تھے۔ ان میں سے زیادہ تر تھیٹر سے تھے۔ان دنوں میں ایک ٹی وی کے نمبرون شو’تارا‘ کوپروڈیوزکر رہی تھی اورلکھ بھی رہی تھی۔ وہ میرے لیڈہیروئن کے پیچھے پڑے تھے، لیکن اس کی ان میں دلچسپی نہیں تھی۔ وہ ایک شرابی تھے ،بے شرم اورگھناؤنے بھی لیکن وہ اس دہائی کا ٹیلی ویزن اسٹار بھی تھے اس لئے نہ صرف اس کے برے اخلاق کے لئے اسے معاف کر دیا جاتا تھا بلکہ کئی لوگ اسے مزید برا بننے کے لئے اکساتے تھے۔
فیس بک پوسٹ کے مطابق، اس اداکار نے ان کی عصمت دری کی اور شو کی اداکارہ کے ساتھ ناجائز حرکت کی۔ نندا نے لکھا کہ ملزم اداکار شراب کے نشے میں شو کے سیٹ پر آتا اور اداکارہ کے ساتھ ناقابل برداشت حرکتیں کرتا۔ اداکارہ نے جب شکایت کی تو ہم نے اسے ایک موقع دیا۔لیکن اس کی حرکتیں نہیں روکیں اور ایک دن اس نے شراب کے نشے میں سیٹ پر اداکارہ کے ساتھ ناجائز حرکت کی۔ اداکارہ نے اسے طمانچہ مار دیا۔ اس کے بعد اس اداکار کو شو سے ہٹا دیا گیا۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *