ماب لنچنگ:رپورٹ پیش نہ کرنے پرسپریم کورٹ نے کی ریاستی حکومتوں کی کھینچائی

Supreme-Court
ملک میں ہجومی تشدد کے بڑھتے واقعات پر سپریم کورٹ نے ایک مرتبہ پھر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ سپریم کورٹ نے ماب لنچنگ معاملے میں اس کے رہنما ہدایات سے متعلق اسٹیٹس رپورٹ پیش نہ کرنے والی ریاستوں کو رپورٹ پیش کرنے کے لئے مزید ایک ہفتے کا وقت دیا ہے۔اب معاملے کی اگلی سماعت 13 ستمبر کو ہوگی۔
عدالت عظمیٰ نے ریاستی حکومتوں سے ماب لنچنگ پر سپریم کورٹ کے ذریعہ پہلے جاری کی گئیں ہدایات کو نافذ کرنے پر اسٹیٹس رپورٹ سونپنے کیلئے کہا ہے۔ ملک کی 16 ریاستیں اس سلسلہ میں اپنی رپورٹ سونپ چکی ہیں۔ جن ریاستوں نے ابھی تک اپنی رپورٹ پیش نہیں کی ہے، ایک ہفتے کا مزید وقت دیا جاتا ہے۔سپریم کورٹ نے کہا کہ سماج میں امن اور خیر سگالی کو ہر حال میں قائم رکھنا ہوگا۔
چیف جسٹس دیپک مشرا کی سربراہی والی بینچ نے جمعہ کو ان ریاستوں کو گزشتہ 17 جولائی کو رہنما ہدایت پر عمل کے بارے میں ایک رپورٹ پیش کرنے کے لئے ایک ہفتے کا مزید وقت دیا۔جسٹس مشرا نے کہا ہے کہ اگر رپورٹیں پیش نہیں کی گئیں تو پھر ریاستی سکریٹری داخلہ کو عدالت میں ذاتی طور پر پیش ہونا ہوگا۔
واضح رہے کہ اس سے پہلے سپریم کورٹ نے ملک میں آئے دن ہجومی تشدد کے واقعات پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔ عدالت نے کہا تھا کہ ہجومی تشدد ایک جرم ہے۔ عدالت نے کہا کہ کوئی بھی شخص قانون اپنے ہاتھ میں نہیں لے سکتا ہے اور اس طرح کے واقعات پر قابو پانا ریاستی حکومت کی ذمہ داری ہے۔
بہرکیف سپریم کورٹ نے سبھی ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو ہدایت دی کہ وہ اپنی سرکاری ویب سائٹوں پر ہجومی تشدد کے خلاف گائیڈ لائن جاری کریں۔ سپریم کورٹ نے اس معاملہ کی اگلی سماعت کیلئے 13 ستمبر کی تاریخ طے کی ہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *