سابق وزیراعظم راجیوگاندھی کی جینتی آج،لیڈران نے پیش کی خراج عقیدت

rajiv-gandhi

سابق وزیراعظم اورکانگریس کے سینئرلیڈرآنجہانی راجیوگاندھی کی آج 75ویں جینتی ہے۔اس موقع پرکانگریس صدرراہل گاندھی، یوپی اے چیئرپرسن سونیاگاندھی، پرینکاگاندھی، سابق وزیراعظم ڈاکٹرمنموہن سنگھ سمیت کئی کانگریس لیڈروں نے انہیں پیش کیا اورنریندرمودی نے بھی ٹویٹ کرکے انہیں خراج تحسین پیش کیا۔

 

1944 میں 20 اگست کے دن راجیو کی پیدائش ہوئی تھی۔ راجیو گاندھی نے ابتدائی تعلیم دہرادون کے مشہور دون اسکول میں حاصل کی۔ اس کے بعد 1961 میں وہ لندن چلے گئے اور وہاں پر انہوں نے کیمبرج کے ٹرینٹی کالج اور امپیریل کالج سے اعلی تعلیم حاصل کی۔ یہاں سونیا میانو ایک اطالوی سے ملاقات ہوئی جو کیمبرج کے تدریس زبان کے اسکول میں زیر علیم تھیں اور 1965ء میں سونیا میانو سے شادی کی۔ اگرچہ شروع میں سونیا کے خاندان نے رشتے کی مخالفت کی، لیکن راجیو اور سونیا نے انہیں منا لیا۔ ایسا مانا جاتا ہے کہ شروع دنوں میں اندرا گاندھی بھی سونیا کو زیادہ پسند نہیں کرتی تھیں، لیکن سنجے گاندھی کی بیوی مینکا گاندھی سے تنازعہ کے پیش نظر وہ سونیا کے ساتھ رہنے لگیں اور آہستہ آہستہ دونوں کے درمیان تعلقات بہت اچھے ہو گئے تھے۔
راجیو گاندھی کی پیدائش ملک کے پہلے وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو کی بیٹی اندرا گاندھی کے گھر میں ہوئی۔ ان کے چھوٹے بھائی سنجے گاندھی تھے اور والد کا نام فیروز گاندھی تھا۔ راجیوگاندھی شروع سے ہی سیاست سے الگ اور اس میں کم دلچسپی رکھنے والے شخص تھے۔ اس کے برعکس ان کے چھوٹے بھائی سنجے گاندھی سیاست میں زیادہ دلچسپی لیتے تھے، لیکن ایک ہوائی جہاز کے حادثے میں ان کی موت کی وجہ سے راجیو گاندھی کو سیاست میں آنا پڑا۔اندرا گاندھی کے قتل کے بعد کانگریس کی ذمہ داری راجیو گاندھی پر آ گئی۔

 

 

1968ء انڈین ایر لائنس میں بحیثیت پائلٹ شامل ہوئے۔11 مئی 1981ء سیاست میں شامل ہوئے۔ کانگریس کی ابتدائی رکنیت حاصل کی۔ 15 جون 1981ء امیٹھی پارلیمانی حلقہ سے ممبر پارلیمنٹ منتخب ہوئے۔ 2 فروری 1983ء کانگریس کے جنرل سکریڑی مقرر ہوئے۔ 31 اکتوبر 1984ء اپنی والدہ اندرا گاندھی (جو اس وقت ہندوستان کی وزیر اعظم تھیں ) کے قتل کے بعد ہندوستان کے وزیر اعظم بنے۔نومبر 1984ء راجیو گاندھی کی قیادت میں کانگریس واضح اکثریت سے اقتدار میں واپس آئی۔31 دسمبر 1984ء دوسری بار ہندوستان کے وزیر اعظم کی حیثیت سے حلف لیا۔ 24 جولائی 1985ء آسام کے مسئلے کے حل کے لیے مصالحتی میمورنڈم پر دستخط کیے۔ 15 دسمبر 1985ء بییونڈ وار (Beyond war ) فاؤنڈیشن سے، بییونڈ وار (Beyond war ) ایوارڈ قبول کیا۔ 4 اگست 1986ء کامن ویلتھ، اجلاس لندن میں حصہ لیا۔ 8 اگست 1986ء میکسیکو میں ( Peace and disarmament ) امن اور ترک اسلحہ پر 6 ملکوں کی میٹنگ میں حصہ لیا۔1 ستمبر 1986ء ہرارے میں آٹھویں ناوابستہ اجلاس میں شریک ہوئے۔10 ستمبر 1986 نکاراگوا کے اعلیٰ ترین اعزازAugusto Caesar Sandini order سے سرفراز کیے گئے۔ 29 جولائی 1987ء سری لنکا کے ساتھ ایک معاہدہ پر دستخط کیے۔ نومبر 1989ء پارلیمنٹ میں حزب مخالف کے لیڈر چنے گئے۔ 21 مئی 1991ء سری پیرومبدور( تامل ناڈو) میں کانگریس پارٹی کی انتخابی مہم کے دوران میں بم دھماکے میں ہلاک ہوئے۔24 مئی 1991ء آخری سفر۔17 جون 1991ء انتقال کے بعد ہندوستان کے سب سے بڑے اعزاز‘‘بھارت رتن‘‘سے نوازے گئے۔ 6 جولائی 1991ء محترمہ سونیا گاندھی نے یہ ایوارڈ وصول کیا۔راجیو گاندھی انتہائی سادہ طبیعت تھے۔ ان کے بارے میں یہ سمجھا جاتا تھا کہ وہ سیاست میں نہیں آنا چاہتے تھے، لیکن پہلے بھائی سنجے گاندھی کی طیارہ حادثے میں موت اور پھر ماں اندرا گاندھی کے قتل کی وجہ سے انہیں سیاست میں آنا پڑا۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *