جنگجوؤں کے ہاتھوں جموں وکشمیر پولیس اہلکاروں کے 11رشتہ داروں کا اغوا 

jammu-kashmir
جنوبی کشمیرکی الگ الگ جگہوں سے جنگجوؤں نے 7پولس اہلکاروں کے رشتے داروں کااغواکرلیا۔ریاستی افسر نے جمعہ کویہ جانکاری دی۔میڈیارپورٹس کے مطابق، جنوبی کشمیر کے اضلاع میں دہشت گروں نے مبینہ انتقامی کاروائی کے تحت جموں وکشمیر پولیس کے سات اہلکاروں کے 11 قریبی رشتہ داروں کو اغوا کرلیا ہے۔ مغوی افراد میں بعض سینئر پولیس افسران کے قریبی رشتہ دار بھی شامل ہیں۔جموں وکشمیرکے سابق وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی اورعمر عبداللہ نے پولس اہلکاروں کے رشتے داروں کے اغواکرنے کی مذمت کی ہے۔
رپورٹوں کے مطابق،ریاستی پولیس نے اغوا کے واقعات کی تصدیق کردی ہے۔ کشمیر زون پولیس کے آفیشل ٹویٹر اکاونٹ پر ایک ٹویٹ میں کہا گیا ’جنوبی کشمیر میں اغوا کاری کے کچھ واقعات پولیس کی نوٹس میں آئے ہیں۔ ہم تفصیلات کو اکھٹا اور حالات کا پتہ لگارہے ہیں‘۔ انتظامیہ نے اغوا کاری کے واقعات کے پیش نظر پوری وادی میں ہائی الرٹ جاری کردیا ہے۔ ان واقعات کی وجہ سے پولیس اہلکاروں کے اہل خانہ میں خوف وہراس پیدا ہوگیا ہے۔
بتایاجارہاہے کہ اغوا کاری کا یہ سلسلہ اگرچہ بدھ کے روز شروع ہوا، تاہم اس میں جمعرات اور جمعہ کی درمیانی رات کے دوران غیرمعمولی شدت دیکھی گئی جس دوران سات پولیس اہلکاروں کے سات قریبی رشتہ داروں کو اغوا کیا گیا۔معاملے کی جانکاری رکھنے افسروں کا کہناہے کہ جنگجوؤں نے کل رات شوپیاں، کولگام، اننت ناگ اوراونتی پوراسے کم سے کم سات لوگوں کا اغواکرلیا۔ان سات لوگوں کے کنبہ کے ممبرجموں وکشمیرپولس کے ساتھ کام کررہے ہیں۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *