اداکارہ میناکماری کوگوگل نے ڈوڈل بناکریادکیا

meena-kumari
ٹریجڈی کوئین میناکماری نے اپنی لاجواب اداکاری کے دم پر قریب تین دہائی تک بالی ووڈ میں اپنی دھاک جمائے رکھی۔زیادہ تر فلموں میں ٹریجڈی والے رول نبھانے کی وجہ سے انہیں’ٹریجڈی کوئین‘ کہاجانے لگا۔ان کا اصلی نام مہ جبیں بانوتھا۔یکم اگست 1932کوپیداہوئیں میناکمارکوگوگل نے ڈوڈل بناکریاد کیا۔
meena-kumari-759
بہرکیف:تقریباً30سال تک بالی وڈ میں راج کرنے والی مینا کماری نناوے فلموں میں کام کیا اور ان کی وجہ شہرت غمگین کردار رہے جن کو فلم بینوں نے بے حد سراہا۔اس زمانے میں جہاں نرگس اور مدھوبالا جیسی اداکارائیں بالی وڈ میں موجود تھیں وہیں مینا کماری نے اپنی الگ پہچان بنائی۔ مینا کماری کے اثرات آج بھی ہندی سینما میں موجود ہیں۔میناکماری نے بالی وڈ کو پاکیزہ، پری نیت، کوہ نور، صاحب بی بی اور غلام ، کاجل، پھول اور پتھر جیسی سپرہٹ فلمیں دیں۔مینا کماری کو یہ اعزازبھی حاصل ہے کہ وہ بالی وڈ کی پہلی ہیروئن ہیں جن کو پہلا فلم فیئر ایوارڈ 1952 کی فلم Baiju Bawra پر ملا۔1972 میں فلم پاکیزہ کی ریلیز کے بعد ہی مینا کماری جگر کے عارضے میں مبتلا ہو گئیں اور 31 مارچ 1972 کو دنیا سے رخصت ہو گئیں۔
کمال امروہوی کانام ذہن میں آتے ہی فلم ’پاکیزہ‘کا خیال ذہن میں ضرور آتا ہے۔حالاں کہ انہوں نے دیگر فلمیں بھی بنائیں لیکن اس شاہکار فلم کے خالق کمال امرہوی کا یہ ڈریم پروجیکٹ تھا۔بہترین ڈائیلاگ‘ موسیقی‘نغمے اورمیناکماری کی بے مثال اداکاری کی بدولت اس فلم نے ناظرین کے دل و دماغ پرایسے نقوش ثبت کئے‘ جنہیں آج تک محو نہیں کیا جاسکا۔ اس کے نغموں میں اس قدر کشش ہے کہ آج بھی جب فلم’پاکیزہ‘ کے نغمے کہیں سنائی دیتے ہیں تو لوگوں کے دل کی دھڑکنیں تھم جاتی ہیں۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *