سابق سی ایم فاروق عبد اللہ کے گھر میں جبراً گھسے شخص کو سیکورٹی اہلکاروں نے مار گرایا

jammu
جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ اور نیشنل کانفرنس کے صدر فاروق عبد اللہ کے گھرمیں اس وقت ہڑکمپ مچ گیا،جب کار سوار ایک شخص نے زبردستی ان کے گھرمیں گھس کرتہس نہس کرنے کی کوشش کرنے گا۔تبھی گھرمیں موجود سیکوریٹی اہلکاروں نے کارگھسانے کی کوشش کررہے شخص کوگولی ماردی۔بتایاجارہاہے کہ جموں وکشمیرکے سابق سی ایم فاروق عبداللہ کے رہائش گاہ پراپنی کار گھسارہاتھا اور وہ شخص گھرکی لابی میں گھس گیاتھا،سیکوریٹی اہلکاروں نے اسے روکنے کی کوشش کی، مگرجب وہ نہیں ماناتواسے گولی ماری گئی۔میڈیا رپورٹس کے مطابق، اس شخص کی شناخت پونچھ کے رہنے والے مرفس شاہ کے طور پر ہوئی ہے۔بتایاجارہاہے کہ اس حادثے میں ایک پولس اہلکاربھی زخمی ہوگیاہے۔ اس واقعہ کے وقت فاروق یا ان کے بیٹے عمر عبداللہ اس گھر میں موجود نہیں تھے۔
بتادیں کہ فاروق عبداللہ جموں کے بھٹنڈی علاقے میں رہتے ہیں۔پولس ذرائع نے کہاہے کہ وہ شخص گھرمیں گھسنے کے بعد گھرمیں موجودسامان کونقصان پہنچانے لگاتھا اوراس کے پاس کوئی ہتھیارنہیں تھا۔ بہرکیف صبح کے وقت جب سیکورٹی دستے گشت کر رہے تھے، تبھی کار سوارنقاب پوشوں نے کالونی کے گیٹ پر لگے بیریکیڈ کو توڑتے ہوئے اندر گھسنے کی کوشش کی۔ کار سوار کو دیکھتے ہوئے سیکورٹی فورسز نے فائرنگ شروع کردی۔ سیکورٹی فورسز کی گولی سے نقاب پوش زخمی ہو گیا۔ زخمی کو اسپتال میں بھرتی کرایا گیا جہاں اس کی موت ہو گئی۔
حملے کے بارے میں معلومات ملتے ہی جموں و کشمیر کے پولیس افسران جائے حادثہ پر پہنچ گئے اور معاملہ کی تحقیقات شروع کردی ہے۔ معاملے کی سنگینی کے مدنظر علاقہ میں سیکورٹی دستوں کو تعینات کر دیا گیا ہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *