طلاق ثلاثہ میں ضمانت دینے کا اختیارصرف مجسٹریٹ کو

Triple-talaq
مرکزکی مودی سرکارتین طلاق (طلاق بدعت) اورنکاح حلالہ سے متعلق مسلم خواتین (شادی حقوق تحفظ) بل 2017میں مرکزی کابینہ نے کچھ ترامیم کومنظوری دے دی ہے۔ جس میں طلاق ثلاثہ کے معاملے کوغیرضمانتی جرم تومانا گیاہے لیکن ترمیم کے حساب سے اب مجسٹریٹ کوضمانت دینے کا اختیارہوگا۔
بہرکیف طویل عرصے سے طلاق ثلاثہ کے خلاف لڑرہی مرکزی سرکار اب اس پرتھوڑی نرم ہوتی نظرآرہی ہے۔مانسون سیشن کے آخری دن مودی کابینہ طلاق ثلاثہ بل میں ترمیم کومنظوری دے دی ہے۔ اس ترمیم (تبدیلی) کے تحت طلاق ثلاثہ اب بھی غیرضمانتی ہی رہے گا۔لیکن ترمیم کے حساب سے مجسٹریٹ اس کیس میں ضمانت دے سکتاہے۔یعنی اب مجسٹریٹ کے پاس ہی ضمانت دینے کا اختیارہوگا۔اس کے علاوہ بیوی اوراس کے رشتے داروں کوایف آئی آردرج کرنے کا حق ہوگا۔

 

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *