میرٹھ کے بی جے پی لیڈرکابھائی آبروریزی معاملے میں گرفتار

Demo-Pic
پولس نے نابالغہ سے جنسی زیادتی کے معاملے میں میرٹھ کے بی جے پی لیڈر کے بھائی کوگرفتار کیاہے۔ دہرادون کے پریم نگر تھانے میں بی جے پی لیڈر کے بھائی کے خلاف معاملہ درج ہواتھا۔اس کے بعد سے ملزم فرارچل رہاتھا، جسے جمعہ کوصبح گرفتارکرلیاگیا۔پریم نگر تھانہ صدر مکیش تیاگی نے بتایاکہ 27جولائی کو پرمود سوم ولد دیو سنگھ رہائشی شردھاپوری فیس ون سیکٹر 3/555تھانہ کنکرکھیڑا میرٹھ کے خلاف پاکسوایکٹ کے ساتھ آبرریزی کا معاملہ درج کرایا تھا۔پرمود سوم پرالزام ہے کہ اس نے پہلے لڑکی سے دوستی کی اورپھرجھانسادیکر آبروریزی کی۔ ملزم میرٹھ میں ٹریڈنگ کا کام کرتاہے ،اس کا دہرادون آنا جانا رہتاہے۔
متاثرہ کا الزام ہے کہ اس پرملزم لگاتاردباؤ بنارہاکہ وہ شکایت نہ کرے ۔ الزام ہے کہ اس نے متاثرہ کو فون پر جان سے مارنے کی دھمکی بھی دی تھی۔پولس کے مطابق، متاثرہ کے ساتھ یہ جب واقعہ پیش آیا تب وہ نابالغ تھی اوردہرادون میں ہی الگ الگ ہوٹلو ں میں اس کے ساتھ ریپ کیاگیا۔ ملزم کے خلاف گزشتہ ماہ متاثرہ کے خاندان والوں نے مقدمہ درج کرایا تھا۔ پولیس آج ہفتہ کے روز ملزم کو عدالت میں پیش کرے گی۔
میڈیارپورٹس کے مطابق،متاثرہ کے خاندان والوں کا الزام ہے کہ پرمود کا ان کے گھر آنا جانا تھا۔ سال 2015 میں جب ان کی بیٹی نابالغ تھی تو پرمود اسے کوتوالی علاقہ کے ایک ہوٹل میں لے گیا۔ وہاں اس نے لڑکی کے ساتھ زبردستی کرنے کی کوشش کی۔
سال 2016 میں جب لڑکی نے یہ بات اپنے گھروالوں کو بتائی تو پرمود غصہ ہو گیا اور فون پر اسے جان سے مارنے کی دھمکی دینے لگا۔ واضح ہو کہ اب لڑکی بالغ ہو چکی ہے۔ متاثرہ کے فون میں پرمود کی دھمکی والی ریکارڈنگ ہے۔ پولیس نے لڑکی کے فون کو فورینسک لیب میں جانچ کے لئے بھیج دیا ہے۔ بہرکفے نابالغہ سے آبروریزی کی کوشش کرنے کے الزام میں میرٹھ کے بی جے پی لیڈر کے بھائی کو پولیس نے گرفتار کر لیا ہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *