اے ایم یو میں عالمی ہیپا ٹائٹس ڈے کے موقع پر پروگرام منعقد

Prof-SM-Safdar-Ashraf
علی گڑھ مسلم یونیورسٹی (اے ایم یو) کے اجمل خاں طبیہ کالج کے شعبۂ تحفظی و سماجی طب کے زیر اہتمام عالمی ہیپاٹائٹس ڈے کے موقع پر ایک لیکچر کا انعقاد کیا گیا جس میں ہیپاٹائٹس بی کے خطرات سے لوگوں کو آگاہ کرنے کے ساتھ ہی انہیں اس سے تحفظ کے ضروری اقدامات کے تئیں بیدار کیا گیا۔یونانی میڈیسن فیکلٹی کے سابق ڈین پروفیسر سید مودود اشرف نے ہیپاٹائٹس کے علاج سے متعلق اقدامات پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ یونانی طریقۂ علاج میں بھی اس کا بہتر علاج موجود ہے اور عظیم یونانی اطباء نے اس پر کافی کام کیا ہے۔انہوں نے یونانی میڈیسن کے طلبہ سے کہا کہ وہ اس مرض پر مزید تحقیق کریں۔
تحفظی و سماجی طب شعبہ کے سربراہ پروفیسر ایس ایم صفدر اشرف نے کہا کہ دستیاب اعداد وشمار کے مطابق ملک میں تقریباً پانچ کروڑ افراد کرانک ہیپاٹائٹس سے متاثر ہیں۔ وائرل انفیکشن کی وجہ سے لیور میں سوجن کو ہیپاٹائٹس کہا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہیپاٹائٹس کی علامتیں اس نوع کی دوسری بیماریوں سے ملتی جلتی ہیں اس لئے ڈائگناسٹک ٹیسٹ کے بغیر اس کی پہچان نا ممکن ہے۔ پروفیسر اشرف نے کہا کہ دنیا بھر میں موجودہ وقت میں تقریباً چالیس کروڑ لوگ ہیپاٹائٹس بی وائرس کا شکار ہیں۔ انہوں نے ورلڈ ہیپاٹائٹس ڈے کے اس سال کے موضوع ’’یونی ورسل ہیلتھ کَوریج‘‘ کے تعلق سے دواؤں کے اتصال پر بھی گفتگو کی۔
یونانی میڈیسن فیکلٹی کے ڈین پروفیسر خالد زماں خاں نے مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔ نظامت کے فرائض ڈاکٹر عبدالعزیز خاں نے ادا کئے جبکہ پروگرام کے انعقاد میں ڈاکٹر محمد عثمان، پی جی طلبہ ڈاکٹر کلیم، ڈاکٹر جاوید اور ڈاکٹر سعید کے علاوہ انٹرنس شیبا، ارم، آفرین، شمع، مبشر اور شعبے کے اسٹاف نے خصوصی کردار نبھایا۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *