سیتا رام یچوری نے کہا!2019 لوک سبھا الیکشن سے قبل کوئی مہا گٹھ بندھن نہیں بنے گا

sitaram-yechury
آئندہ لوک سبھاالیکشن 2019میں جہاں متحدہ اپوزیشن مرکزکی مودی سرکارکوہٹانے کی کوشش میں لگاہواہے،وہیں متحدہ اپوزیشن پارٹیوں کوملاکربنانے والے گٹھ بندھن کانام بھی طے ہو گیاہے۔اس بات کا دعویٰ کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کے جنرل سکریٹری سیتا رام یچوری نے کیاہے۔انہو ں نے کہاکہ مجھے نام پتہ ہے لیکن بتاؤں گا نہیں۔حالانکہ رام یچوری نے یہ بھی کہاکہ 2019 لوک سبھا الیکشن سے قبل قومی سطح پر اپوزیشن پارٹیوں کا عظیم اتحاد (مہا گٹھ بندھن) بنائے جانے کے امکانات نہیں ہے۔ یچوری نے کہا کہ اس طرح کا اتحاد لوک سبھا الیکشن کے نتائج کے اعلان کے بعد ہی ہوسکتا ہے۔
سیتا رام یچوری نے پریس کانفرنس میں کہا کہ ’میرا یہ ماننا ہے کہ ہندوستان میں الیکشن سے قبل کوئی بھی مہا گٹھ بندھن بننا ممکن نہیں ہے۔ کیونکہ ہمارا ملک تغیرات والا ہے‘۔ یچوری نے کہا کہ اس بار بھی آپ ویسا ہی دیکھیں گے، جیسا 1996 میں دیکھنے کو ملا تھا، جب متحدہ مورچہ نے سرکار بنائی تھی اور 2004 میں جب یوپی اے کی پہلی حکومت بنی تھی۔
یچوری نے کہا کہ ملک کے لوگ مرکز کی ’’عوام مخالف حکومت‘‘ سے نجات حاصل کرنا چاہتے ہیں، لیکن متبادل سیکولر اور جمہوری حکومت لوک سبھا الیکشن کے بعد ہی بن سکتی ہے۔انہو ں نے کہ علاقائی سیکولر جماعتیں بھی عام الیکشن کے بعد ایک ساتھ آئیں گی۔ حالانکہ انہوں نے متبادل سیکولر مورچہ کا نام نہیں بتایا۔
انہوں نے یہ پوچھے جانے پر کہ کیا کمیونسٹ متبادل سیکولر مورچہ کا حصہ بنے گی تو انہوں نے کہا کہ ہماری پارٹی نے مرکزی حکومت کو باہر سے حمایت دی تھی۔ ہم نے ایسا 1989, 1996 اور 2004 میں کیا تھا۔جب ان سے سوال کیاگیاکہ اگرترنمول کانگریس کواپوزیشن مورچہ میں شامل کیاگیاتوکیاکمیونسٹ پارٹی آف انڈیااس کا حصہ بنے گی۔اس پرانہو ں نے کہاکہ ترنمول اوربی جے پی میں خفیہ تال میل ہے اورترنمول کی بی جے پی سے لڑنے کی طاقت نہیں ہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *