پاکستان: سابق پی ایم نواز شریف کو 10 اور بیٹی مریم نواز کو 7 سال کی سزا

nawaz-sharif
پاکستان کے سلام آباد میں ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت کرنے والی احتساب عدالت نے پاکستان کے سابق وزیراعظم نواز شریف کو 10 سال قید بامشقت،ان کی بیٹی مریم نواز کو 7 سال قید جبکہ داماد کیپٹن (ر) صفدر کو ایک سال قید بامشقت کی سزا سنا دی ہے جبکہ نواز شریف کو 80 لاکھ جبکہ مریم نواز کو 20 لاکھ پاؤنڈ جرمانہ بھی کیا گیا ہے۔پاکستانی میڈیا رپورٹس کے مطابق یہ فیصلہ احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے سنایا۔ احتساب عدالت نے نوازشریف پر 80 لاکھ پاؤنڈ اور مریم نواز پر 20 لاکھ پاؤنڈ کا جرمانہ بھی عائد کیا ہے جب کہ ایون فیلڈ اپارٹمنٹس کو سرکاری تحویل میں لینے کا بھی حکم دیاہے۔
اسلام آباد کی احتساب عدالت نے تین جولائی 2018 کو اس مقدمے کا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے ساڑھے نو ماہ سے زیادہ عرصے تک اس ریفرنس کی سماعت کی۔اس ریفرنس میں نواز شریف، مریم نواز، حسن نواز، حسین نواز اور کیپٹن صفدر ملزمان ہیں۔ عدالت حسن اور حسین نواز کو اشتہاری قرار دے چکی ہے۔
خیال رہے پاکستانی سپریم کورٹ کے پناما کیس کے فیصلہ کی روشنی میں نیب نے شریف خاندان کے خلاف 3 ریفرنسز احتساب عدالت میں دائر کر رکھے ہیں، جو ایون فیلڈ پراپرٹیز، العزیزیہ اسٹیل ملز اور فلیگ شپ انویسمنٹ سے متعلق ہیں۔
پاکستانی میڈیارپورٹس کے مطابق،فیصلہ سنائے جانے کے وقت یہ تینوں عدالت میں موجود نہیں تھے۔ نواز شریف اور مریم نواز لندن میں ہیں ، جب کہ کیپٹن ریٹائرڈ صفدر مانسہرہ میں ہیں ، جس کی وجہ سے تینوں عدالت میں پیش نہیں ہوسکے۔خبروں کے مطابق،نواز شریف نے اس کیس کا فیصلہ7 دن تک موخر کرنے کی درخواست دائر کی تھی جس میں کہا گیا ہے کہ اہلیہ کی بیماری کے باعث وہ فوری طور پر وطن واپس نہیں آ سکتے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *