یورپ پہنچنے کی کوشش میں لیبیا کی ساحلوں پرامسال اب تک1ہزارپناہ گزیں ہلاک

rescue-operations
اقوام متحدہ کمیشن برائے پناہ گزین (یو این ایچ آر سی) نے کہا ہے کہ گذشتہ چند دنوں میں بحیرہ روم پار کرکے یورپ پہنچنے کی کوشش میں تقریباً 220پناہ گزیں لیبیا کی ساحلوں پر موت کے آغوش میں سماچکے ہیں۔اتناہی نہیں، میڈیارپوٹس کے مطابق، اقوام متحدہ کے ایک ادارے نے بتایاہے کہ لیبیاسے سمندرکے راستے سے یورپ جانے کی کوشش میں اس سال اب تک کم سے کم 1ہزارپناہ گزینو ں کی ڈوبنے سے موت ہوگئی ہے۔گذشتہ دودن میں ہی لیبیاکے ساحلوں پر200سے زیادہ پناہ گزینوں کی موت ہوگئی ہے۔
یو این ایچ آر سی کی بیان کے مطابق گذشتہ منگل کو کشتی ڈوبنے سے ایک سو پناہ گزینوں میں سے صرف پانچ افراد ہی زندہ بچ سکے۔ اسی دن 130لوگوں کو لے کر جارہی ربر کی ایک کشتی ڈوب گئی جس میں ستر تارکین وطن کی پانی میں ڈوب کر موت ہوگئی۔بدھ کو بچائے گئے تارکین وطن اور پناہ گزینوں نے بتایا کہ ان کے ساتھ سفر کرنے والے پچاس سے زائد افراد سمندر میں غرقاب ہوگئے۔
ایجنسی نے کہا کہ یو این ایچ آر سی پناہ گزینوں او ر تارکین وطن کی سمندر میں ڈوب کر ہلاک ہونے کے واقعے پر فکر مند ہے۔ اس پر فوراً بین الاقوامی کارروائی کی ضرورت ہے تاکہ تمام ضروری اقدام کرکے سمندر میں راحت اور بچاو نظام کو مضبوط بنایا جاسکے۔ اس میں پورے بحر روم میں راحت او ربچاو کاموں میں اہم رول ادا کرنے وایل غیر سرکاری تنظیموں ، تجارتی جہازوں اور دیگر شامل ہیں۔
پناہ گزینوں کیلئے اقوام متحدہ کے ہائی کمشنرنے کل ایک بیان میں کہاہے کہ سمندرمیں ہورہی موتوں سے حیران ہیں اوران پرقابوپانے کیلئے ایمرجنسی کارروائی ہونی چاہئے۔یواین ایس آرسی نے کل ایک بیان میں کہاہے کہ ادارہ سمندرمیں پناہ گزینوں اورتارک وطن کی بڑھتی موتوں سے مایوس ہے اوربحیرہ میں این جی اواورسمندری تجارتی جہازوں کی مددسے بچاؤ کوشش کومضبوط کرنے کیلئے ایمرجنسی بین الاقوامی کاررائی کامطالبہ کرتاہے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *