مکہ اجلاس حقیقی بھائی چارے اور یکجہتی کی عمدہ مثال ہے: شاہ عبداللہ دوم

shah-abdullah
دبئی : العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق،اردن کے فرمانروا شاہ عبداللہ دوم نے اپنے ایک بیان میں مکہ معظمہ میں خادم الحرمین الشریفین کی زیرصدارت اردن میں معاشی بحران کیحل کے حوالے سے ہونیوالے اجلاس کا خیر مقدم کرتے ہوئے شاہ سلمان کا خصوصی شکریہ ادا کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ مکہ اجلاس نے عرب بھائی چارے اور یکجہتی کی عمدہ مثال قائم کی ہے۔
العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مائیکرو بلاگنگ ویب سائیٹ ’ٹوئٹر‘ پر پوسٹ کردہ ایک ایک بیان میں شاہ عبداللہ دوم نے لکھا کہ ہمارے وطن[اردن] کو درپیش بحران کیحل کے لیے سعودی فرمانروا شاہ سلمان نے دیگر عرب ممالک کویت اور متحدہ عرب امارات کو ایک میز پر جمع کرکے بھائی چارے کی عمدہ مثال قائم کی ہے۔ اردن سعودی عرب اور دیگر عرب برادر ممالک کے اس مستحسن اقدام کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔ ہمیں توقع ہے کہ آئندہ بھی عرب ممالک اسی طرح کے عرب بھائی چارے او یکجہتی کا مظاہرہ کریں گے۔
خیال رہے کہ اردن میں جاری معاشی بحران کے تناظر میں سعودی عرب کی میزبانی میں چار ممالک کا اہم اجلاس اتوار کی شام مکہ مکرمہ میں ہوا۔ اس سربراہ اجلاس کی صدارت سعودی فرماں روا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے کی۔ ان کے علاوہ اردن کے فرماں روا شاہ عبداللہ دوم، امیرِ کویت الشیخ صباح الاحمد الصباح اور متحدہ عرب امارات کے نائب صدر الشیخ محمد بن راشد نے بھی شرکت کی۔
سربراہ اجلاس میں اردن کے لیے 2.5 ارب ڈالر کے امدادی پیکج کا اعلان کیا گیا۔ پیکج میں درجِ ذیل اقدامات شامل ہوں گے :1۔ اردن کے مرکزی بینک میں رقم ڈپازٹ کرنا۔2۔ اردن کے حق میں عالمی بینک کو ضمانتیں پیش کرنا۔3۔ پانچ برس تک اردن کے سرکاری بجٹ کو سپورٹ کرنا۔4۔ ترقیاتی فنڈز سے اردن میں ترقیاتی منصوبوں کے لیے رقوم پیش کرنا۔
اس موقع پر شاہ عبداللہ دوم نے اجلاس کے انعقاد پر خادم حرمین شریفین کا شکریہ ادا کیا اور ان کے نیک جذبات کو خراج تحسین پیش کیا۔ اردن کے فرماں روا نے اجلاس میں شرکت پر کویت اور متحدہ عرب امارات کے لیے بھی اظہار تشکر کیا۔ شاہ عبداللہ نے کہا کہ وہ اردن کے حالیہ بحران کے خاتمے کے لیے تینوں ممالک کی جانب سے پیش کیے جانے والے امدادی پیکج پر انتہائی ممنون ہیں۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *