کانگریس کوجھٹکا:دوبڑے سینئرلیڈرشاہی اور نائک نہیں رہے

naik-shahi
کانگریس پارٹی کیلئے ہفتہ کی صبح کافی افسوسناک رہاہے۔ دراصل آج کانگریس پارٹی نے اپنے دوسینئرلیڈروں کوہمیشہ کیلئے کھودیاہے۔ ایک طرف بہار سے آنے والے سابق مرکزی وزیر للتیشور پرسا دشاہی نے ہفتہ کی صبح دہلی کے ایمس اسپتال میں دم توڑ دیا ۔ کانگریس کے سینئر لیڈر اور سابق مرکزی وزیر للتیشور پرساد شاہی کا انتقال ہفتہ کی صبح دہلی کے ایمس میں ہو گیا ۔ اہل خانہ کے مطابق دوپہر ان کاجسد خاکی خصوصی طیارے سے پٹنہ لے جایا جائے گا ۔ وہ بنیادی طور سے بہار کے ویشالی ضلع کیسائن گاؤں کے رہنے والے تھے ۔ کانگریس کے قد آور لیڈر اور98 سالہ شاہی1980میں ممبر اسمبلی بننے کے بعد وہ 1984میں مظفر پور سیٹ سے رکن پارلیمنٹ بھی منتخب ہوئے تھے ۔
دوسرطرف گوا کانگریس کے سابق صدر اور سابق راجیہ سبھا رکن پارلیمنٹ شانتا رام نائک کا دل کا دورہ پڑنے کے بعد آج صبح انتقال ہو گیا ۔72سال کے شانتا رام نائک کو منڈگاؤں واقع ان کی رہائش گاہ سے ایک پرائیویٹ اسپتال لے جایا گیا ۔ جہاں آج صبح دل کا دورہ پڑنے کے بعد ان کا انتقال ہو گیا ۔ صبح سات بجے انہوں نے آخری سانس لی۔ شانتا رام نائک 1984 میں لوک سبھا کے لئے چنے گئے تھے ۔ نائک 2005سے 2011 اور 2011سے 2017تک لگا تار دو بار راجیہ سبھا کے لئے منتخب ہوئے تھے ۔ شانتا رام نائک کی موت پر کانگریس صدرراہل گاندھی نے بھی دکھ جتایا ہے ۔ انہوں نے ٹوئٹ کر کے کہا کہ گوا کانگریس کے سابق چیف ،رکن پارلیمنٹ اور سینئر کانگریس لیڈر شانتا رامنائک کے انتقال کے بارے میں سن کر مجھے دکھ ہے جنہوں نے گوا کی ریاست کے لئے لڑائی میں اہم کردار ادا کیا ۔ اس دکھ کے وقت میں ان کے لواحقین کے تئیں میری ہمدردی ہے ۔ ایشور ان کی روح کو شانتی دے۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *