باباداتی مہاراج اور اس کے شاگردوں پر جنسی زیاتی کاالزام ،پولس میں شکایت

daati-maharaj

ہمیشہ دوسروں کوپروچن اورپوجا-پاٹھ کی تربیت دینے والے باباؤں کے خلاف عصمت دری کے مقدمہ درج ہونے کاسلسلہ کم نہیں ہورہاہے۔اسی سلسلے میں ایک اورنام کاانکشاف ہواہے۔دہلی شانیدھام کے باباداتی مہاراج کے خلاف ایک خاتون نے پولس میں مقدمہ درج کرایاہے۔راجستھان کی رہائشی ایک 25 سالہ لڑکی نے خود ساختہ بابا اور اس کے شاگردوں پر اس کے ساتھ بار بار عصمت دری کرنے کا الزام لگایا ہے۔ جنوبی دہلی کے فتح پور بیری تھانے میں لڑکی نے کل داتی مہاراج کے خلاف شکایت دی ہے۔ لڑکی نے پولیس کو بتایا کہ وہ تقریبا گزشتہ دس سالوں سے مہاراج کی پیروکار تھی۔ لیکن مہاراج اور شاگردوں کے ذریعہ بار بار عصمت دری کئے جانے کے بعد وہ اپنے گھر راجستھان لوٹ گئی۔لڑکی نے الزام لگایا ہے کہ بابا کی ایک دیگر خاتون پیروکار اسے مہاراج جی کے کمرے میں زبردستی بھیجتی تھی۔ منع کرنے پر وہ دھمکی دیتی تھی کہ وہ سبھی سے کہے گی کہ متاثرہ دوسرے شاگردوں کے ساتھ بھی جنسی تعلق رکھتی ہے۔وہ تقریبا دو سال پہلے آشرم سے بھاگ گئی تھی اور ایک طویل عرصے سے ڈپریشن میں تھی۔ ڈپریشن سے ابھر کر اس نے اپنے والدین کو پوری بات بتائی اور ان کے ساتھ پولیس سے شکایت کی ہے۔دہلی خواتین کمیشن کی صدر سواتی مالیوال نے متاثرہ سے ملاقات کر کہا کہ اسے پولیس سیکورٹی ملنی چاہئے۔
مالیوال نے ٹویٹ کیا، “داتی مہاراج کی طرف سے مبینہ طور پر عصمت دری کی شکار ہوئی لڑکی سے ملی۔ لڑکی کی کہانی انتہائی ڈراونی ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ وہ شدید تشدد سے گزری ہے۔ اس کی جان کو خطرہ ہے۔ دہلی پولیس کو اسے فوری طور پر سیکورٹی مہیا کرنے کو کہا ہے۔ داتی مہاراج کو فوری طور پر گرفتار کیا جانا چاہئے۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *