اسپاٹ فکسنگ معاملہ:کرکیٹرسری سنت کونہیں ملاسپریم کورٹ کاسہارا

cricketer-sreesanth
سپریم کورٹ نے کرکیٹر سری سنت کواسپاٹ فکسنگ معاملے میں کوئی راحت نہیں دی ہے ۔ نچلی عدالت کے بعداب سپریم کورٹ سے بھی کوئی سہارانہیں مل رہاہے۔سری سنت کو تا حیات پابندی عائد کرنے کے بی سی سی آئی کے فیصلے کے خلاف دائر عرضی پر سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے گذشتہ روزدہلی ہائی کورٹ کوہدایت دی ہے کہ وہ 2013کے آئی پی ایل اسپاٹ فکسنگ معاملے پر جولائی تک فیصلہ کرے۔سپریم کورٹ اس معاملے کی اگلی سماعت اگست میں کرے گا۔سماعت کے دوران سری سنت کی جانب سے سینئر وکیل سلمان خورشید نے مطالبہ کیا کہ سری سنت کو اسکاٹ لینڈ میں انگلش کاؤنٹی لیگ میچ میں کھیلنے کی اجازت دی جائے۔ تب چیف جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والی بنچ نے کہاکہ سری سنت کوکلین چٹ دینے کے خلاف دائر اپیل پردہلی ہائی کورٹ کوفیصلہ کرنے دیں۔

 

یہ بھی پڑھیں   دہلی-این سی آر میں دیر رات آئی تیز آندھی،کئی علاقوں کیلئے الرٹ جاری

 

پہلے کی سماعت کے دوران سلمان خورشید نے کہا تھا کہ بی سی سی آئی کی پابندی کی وجہ سے سری سنت پچھلے پانچ برسوں سے کرکٹ نہیں کھیلا ہے ۔ یہ ان کے خلاف کافی سزا ہے ۔ بی سی سی آئی نے سپریم کورٹ سے کہا تھا کہ یہ کھلا مسئلہ ہے جس میں فون کی بات چیت سے یہ واضح ہو گیا کہ انہوں نے آئی پی ایل 2013میں پیسے لے کر جان بوجھ کر نو بال ڈال رہے تھے۔
اسپاٹ فکسنگ کے الزامات کی جانچ کے بعد بی سی سی آئی نے سری سنت پر تا حیات پابندی لگائی تھی۔اس پابندی کو سری سنت نے کیرل ہائی کورٹ میں چیلنج دیا تھا ۔ ہائی کورٹ کی سنگل بنچ نے بی سی سی آئی کے حکم پر روک لگا دی۔سنگل بنچ نے فیصلے کے خلاف بیسی سی آئی نے ڈویزن بنچ میں اپیل کیجس نے سنگل بنچ کے فیصلے کو رد کرتے ہوئے تا حیات پابندی کے فیصلے کو درست ٹھہرایا تھا ۔ ڈویزن بینچ کے اس فیصلے کے خلاف سری سنت نے سپریم کورٹ میں عرضی دائر کی تھی۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *