دارالعلوم دیوبند کے نام سے فرضی خبریں چلانے والے ٹی وی چینلوں کے خلاف قانونی کارروائی جائے گی:مولاناعبدالخالق مدراسی

darul-uloom-deoband-UP
دارالعلوم دیوبند کے قائم مقام مہتمم مولانا عبد الخالق مدراسی نے کہاہے کہ الیکٹرانک میڈیا کے ذریعہ ریاست اتر پردیش میں ہو رہے ضمنی الیکشن میں غلط طریقے سے دارالعلوم دیوبند کا نام استعمال کیا جا رہا ہے ۔انکے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی۔انہوں نے ایک اخباری بیان جاری کر کہا ہے کہ دارالعلوم دیوبند نے کبھی بھی سیاسی اپیل جاری نہیں کی ہے اور نہ ہی اس ضمنی انتخابات کے لئے ادارے سے کوئی اپیل جاری کی گئی ہے ۔انہوں نے کہا کہ جو بھی الیکٹرانک چینل اس سلسلے میں دارالعلوم کا نام استعمال کررہے ہیں وہ غلط ہیں ان کے خلاف قانونی کارروائی کئے جانے کی تیاری کی جا رہی ہے ۔
معلوم ہو کہ کچھ چینل اتر پردیش میں ہونے والے ضمنی انتخابات میں دارالعلوم دیوبند کی طرف سے مسلمانوں کے لئے جاری کئے جانے والی اپیلکے بارے میں خبر نشر کر رہے ہیں۔ اس خبر میں مسلمانوں سے مہا گٹھ بندھن کو ووٹ دینے کی اپیل کی جا رہی ہے ۔جبکہ دارالعلوم دیوبند کا کہنا ہے کہ ان کی طرف سے اس طرح کی کوئی اپیل جاری نہیں کی گئی ہے ۔چینل کے ذریعہ اپنا ذاتی مفاد حاصل کرنے کے لئے یہ غلط خبر نشر کی جا رہی ہے ۔
دارالعلوم دیوبند کے قائم مقام مہتمم مولانا عبد الخالق مدراسی نے کہا ہے کہ دارالعلوم دیوبند نے کسی بھی طرح کے سیاسی معاملات اور حالات پر کبھی تبصرہ نہیں کیا ۔سیاسی بیان بازی اس ادارے کا شیوہ نہیں ہے ۔جب تک کوئی شرعی مسئلہ در پیش نہ ہو سیاسی ،سماجی معاملات پر کوئی فتویٰ بھی جاری نہیں کیا جاتا ۔فتویٰ از خود نہیں بلکہ استفتا پر جاری کیا جاتا ہے ۔اس وقت ریات اتر پردیش میں ضمنی انتخابات کے سلسلے میں دارالعلوم دیوبند کی طرف منسوب کر کے جو بیان یا فتویٰ کچھ ٹی وی چینلوں اور میڈیا چینلوں کے ذریعہ نشر کیا جارہاہے وہ قطعی غلط اور شرارت پر مبنی ہے ۔ ہم اس کی تردید اور مذمت کرتے ہیں اور وضاحت کر دینا چاہتے ہیں کہ ضمنی انتخابات کے سلسلے میں کسی کو ووٹ دینے یا نہ دینے کے سلسلے میں کوئی فتویٰ یا بیان دارالعلوم دیوبند نے جاری نہیں کیا۔جن ذرائع ابلاغ نے یہ غیر ذمہ دارانہ حرکت کی ہے ان کے خلاف قانونی کارروائی پر غور کیا جا رہا ہے ۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *