راجندرسچراب نہیں رہے،آج شام ساڑھے پانچ بجے لودھی روڈ الیکٹرک کریمے ٹوریم میں آخری رسومات

Rajinder-Sachar
سچرکمیٹی کے خالق اوردہلی ہائی کورٹ کے سابق چیف جسٹس راجندرسچر کا 94سال کی عمر میں آج یہاں مقامی اسکارٹس فورٹز اسپتال نئی دہلی میں انتقال ہوگیا۔ ان کی رحلت سے تاریخ کا ایک ایسا باب بندہوگیا جوکہ دوصدیوں یعنی 20ویں اور21ویں صدی پرمحیط تھا۔ آج ہی شام ساڑھے پانچ بجے لودھی روڈ پرواقع الیکٹرک کریمے ٹوریم میں ان کی آخری رسومات اداکی جائے گی۔
جسٹس سچرکی پیدائش 20دسمبر1923کوہوئی تھی۔ یہ مشہورومعروف رہنما اورمجاہد آزادی اورپنجاب کے سابق وزیراعظم بھیم سین سچرکے صاحبزادے تھے۔یہ 6اگست 1985سے لیکر 22دسمبر1985تک دہلی ہائی کورٹ کے چیف جسٹس رہے۔بعدازاں سپریم کورٹ میں پریکٹس کرتے رہے اورنازک سے نازک مقدمات میں اپنی قانونی مہارت کے ذریعہ افراد اداروں اورتنظیموں کوراحت پہنچائی۔ اسی کے ساتھ ساتھ حقوق نسانی تنظیموں سے وابستہ رہے۔ پی یوسی ایل اورایف ڈی سی اے کی بھی سربراہی کی۔قانونی خدمات کے علاوہ ان کی جس کارنامے نے بین الاقوامی شہرت دی وہ ان کی سرپرستی میں 7رکنی سچرکمیٹی کے نام سے معروف اعلیٰ سطحی کمیٹی کی 403صفحات پرمشتمل خصوصی رپورٹ تھی ۔جس میں مسلمانوں کوسرکاری طورپربہت پسماندہ قراردیاگیاتھا اوران حالت کوبہتربنانے کیلئے راہیں سجھائی گئی تھیں۔
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *