فلاح کے لئے قرآن و حدیث کی تعلیم پر عمل ضروری: علامہ قمر الزماں اعظمی

Mr-Qamruz-Zaman-Khan-Azmi
علی گڑھ مسلم یونیور سٹی یونٹ میں مسلم اسٹوڈینٹس آرگنائزیشن (MSO)کا ایک روزہ 14واں سالانہ عظیم الشان جلسۂ سیرت النبیؐ’’عظمت رسول کانفرنس‘‘ حسبِ روایت پاکیزہ ماحول میں اختتام پزیر ہوا۔پروگرام کی سرپرستی خانقاہ عالیہ برکاتیہ مارہرہ کے سجادہ پروفیسر سید محمدامین میاں قادری نے کی جبکہ البرکات اسلامک ریسرچ اینڈ ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کے جنرل سکریٹری ڈاکٹر احمد مجتبیٰ صدیقی نے نظامت کے فرائض انجام دئے ۔ پروگرام کا آغازنائب صدر ایم ایس او قاری محمد کیف رضا کی تلاوت کلام پاک سے ہوا۔ بعدہ افضال رضا نے بارگاہ ایزدی میں حمد و بارگاہ رسالتماٰب ؐ میں نعت پیش کی۔ کانفرنس میں صدر ایم ایس او مفتی محمد جاوید عالم مصباحی کی نماز میں عورتوں کی جماعت (مسئلہ امامت نسواں) پر انتہائی تحقیق آمیز کتاب کی رسم اجراء بھی عمل میں آئی اور ایم ایس او کے84 اراکین کو مومینٹو و اسناد دے کر ان کی حوصلہ افزائی کی گئی اسی اثنا میں اردو صحافت کے لیئے تعلیم اسلام کانفرنس کے چیف کنوینر محمد اظہر نور اعظمی اور بلاگ رائٹر اکرم حسین قادری کو ہندی صحافت کے لئے اعزاز دیا گیا۔ اس موقع پر مسلم اسٹوڈینٹس آرگنائزیشن کے قومی صدر انجینئر شجاعت علی قادری بطور مہمان اعزازی شریک ہوئے۔ البرکات سے آئے مولانا الشیخ نعمان احمد ازہری نے سیرت نبی ؐ کے پہلوؤں پر روشنی ڈالتے ہوئے معاشرہ میں پھیل رہی برائیوں کو ختم کرنے کا پیغام دیا۔پروفیسر سید محمد امین میاں قادری نے اپنے دعائیہ خطاب میں ایم ایس او کا مختصر تعارف پیش کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک غیر سیاسی آرگنائزیشن ہے، جس کا کام صرف اللہ و رسول کے پیغامات کی تشہیر کرنا ہے اور ہمیں کتاب اللہ پر ایمان مضبوط رکھتے ہوئے ان تعلیمات کو اپنی عملی زندگی میں اتارنا ہے ۔

 

یہ بھی پڑھیں   فیس بک ڈیٹا لیک معاملہ میں مرکزی حکومت پرراہل گاندھی کا ٹویٹ اٹیک

 

ممبئی سے آئے قاری ریاض الدین نے نعتیہ کلام پیش کیا۔ مقرر خصوصی ورلڈ اسلامک مشن یونائٹیڈ کنگڈم کے جنرل سکریٹری قمر الزماں خاں اعظمی نے کہا کہ قرآن میں اللہ نے انسانوں کو الگ الگ ناموں سے خطاب کیا ہے، اور آج کی تاریخ تک میں جو چیزیں دریافت ہو رہی ہیں وہ سب کی سب1400سال پہلے اللہ نے قرآن میں نازل فرما دی ہیں اور قیامت تک کے لئے آنے والی کوئی ایجاد ایسی نہیں ہو سکتی جو اللہ کی تخلیق کو چیلینج کر سکے۔انہوں نے کہا کہ آج وقت تبدیل ہوا ہے، انسانی فکر تبدیل ہوئی ہے اور نت نئی فکر کے پیدا ہونے سے انسان نے اپنے اسلاف اور اپنے نبی کی تعلیمات سے دوری اختیار کر لی ہے جس کے نتیجہ میں ملکوں کے زوال کے بعد مسلمانوں کے علمی، فکری دور کا بھی زوال شروع ہو گیا لہٰذا قرآن و حدیث کی تعلیمات کو زندہ رکھنے اور عام کرنے کی ضرورت ہے اور دنیا جانتی ہے کہ ہمارے نبی ﷺ کا انقلاب ذہنی، فکری، علمی اور عملی انقلاب ہے، اور ہر دور میں اس انقلاب سے عالم کو تقویت ملتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری پسماندگی ہمارے لئے عذاب بن چکی ہے اورآج ضرورت ہے کہ ہم قرآن و احادیث کو پڑھیں ، سمجھیں اور مستند استاذ سے سیکھ سیکھ کے پڑھیں اور عملی زندگی میں اس کو اتار کر اپنی دین و دنیا کو سنوار لیں انہوں نے مزید کہا کہ اگر ہم قلم کی طاقت پہچان گئے تو دنیا کے ہر معرکہ کو جیتنے میں کوئی شک نہیں۔
صدارتی خطبہ میں علی گڑھ مسلم یونیور سٹی کے نائب شیخ الجامعہ پروفیسر تبسم شہاب نے کہا کہ آج محنت کے بغیر کامیابی کا کوئی تصور نہیں ہے، آج مسلمان ہر شعبہ میں کم ہیں، جب ہم اس کا جائزہ لیتے ہیں تو پاتے ہیں کہ وسائل کی کمی اور تعلیمی میدان میں پیچھے رہ جانے سے ایسا ہوتا ہے، بیماریوں میں بھی دیکھا جائے تو پولیو کو ہم نے ہندوستان سے تقریباًختم کر دیا ہے مگر آج بھی جہاں یہ بیماری ہے اکثریت مسلمانوں کی ملتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ابھی وقت ہے ہم تعلیم و تعلم کے شغف کو اپنا شعار بنا لیں تو ہم ضرور کامیاب ہوں گے۔نائب شیخ الجامعہ نے مسلم اسٹوڈینٹس آرگنائزیشن کے منتظمین کو ان کے خوبصورت نظم وضبط پر مبارک باد بھی پیش کی۔ اس موقع پر مدرستہ البنات العالمیہ علی گڑھ کی طالبات آمنہ خانم فاطمہ (صدر معلمات) کے ساتھ موجود رہیں اس کے علاوہ بیگم سلطان جہاں ہال اور اندرا گاندھی ہال کی طالبات کے علاوہ اے ایم یو کے تمام اقامتی ہالوں کے طلباء کے ساتھ پروفیسر رحیم اللہ خان کے ساتھ سیکڑوں فرزندان توحید موجود رہے۔ آخر میں ایم ایس او کے جنرل سکریٹری محمد انس کے شکریہ اور صلاۃ و سلام کے بعد سید امین میاں قادری کی دعاء کے ساتھ کانفرنس دیررات آئندہ سال کے لئے ملتوی کی گئی۔

 

یہ بھی پڑھیں   مرکزی حکومت جامعہ ملیہ اسلامیہ کواقلیتی درجہ دینے کے حق میں نہیں
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *