آئی پی ایل سیزن 11 19مسلم کھلاڑی نمائندگی کریں گے

نئے تیور،جوش خروش، نئی ٹیموں اور بدلے ہوئے اسٹائل کے ساتھ اس فارمیٹ کے سب سے زیادہ مقبول ٹورنامنٹ انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) کا بخار چڑھنے جا رہا ہے۔ آئی پی ایل کا گیارہواں سیزن 7اپریل سے شروع ہونے والا ہے ۔انڈیا میں 7 اپریل سے آئی پی ایل کا گیارہواں سیزن شروع ہو رہا ہے جس میں آٹھ ٹیمیں چنئی سپرکنگس، دہلی دیئرڈیولس، کنگس الیون پنجاب، کولکاتہ نائٹ رائڈرس، ممبئی انڈینس، راجستھان روائلس، روائل چیلنجررس بنگلور، سن رائزرس حیدرآبادشرکت کر رہی ہیں۔
انڈین پریمیئرلیگ کے 11ہویں سیزن کا پہلامقابلہ 7اپریل کوہے۔ ممبئی کے وانکھیڑے اسٹیڈیم میں اسی دن ٹورنامنٹ کی افتتاحی تقریب کا بھی بڑے دھوم دھام سے اہتمام کیا جائے گا۔اس کے بعد موجودہ چمپئن ممبئی انڈینس اوردوبارکے چمپئن چننئی سپرکنگس کے بیچ کھیلاجائے گا۔آئی پی ایل 7اپریل سے 27مئی 2018 یعنی 51دن تک 9جگہوں پرکھیلے جائیں گے۔اسپاٹ فکسنگ کے باعث دوسال کی پابندی جھیل کر واپسی کررہی راجستھان رائلس اور سپرکنگس ٹیموں کے ناظرین وشائقین کیلئے خوشی کی خبریہ ہے کہ ان دونوں فرنچائزی ٹیموں کے میچ ایم اے چدمبرم اسٹیڈیم چنئی اورسوائی مان سنگھ اسٹیڈیم جے پورمیں کھیلے جائیں گے ۔کنگس الیون پنجاب اپنے تین گھریلومیچ اندور اورچارمیچ موہالی میں کھیلے گا۔آئندہ لیگ میں 12میچ ایسے ہیں ، جوشام چاربجے سے کھیلے جائیں گے جبکہ 48میچ آٹھ بجے سے کھیلے جائیں گے۔

 

 

 

 

 

 

 

 

قابل توجہ بات یہ ہے کہ آئی پی ایل سیزن 11میں کل 19مسلم کرکٹ کھلاڑی میدان میں اپنے بلے بازی ، گیندبازی اورفیلڈنگ میں بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے ہیں۔ آٹھ ٹیموں میں سے کولکاتہ نائٹ رائڈرس کوچھوڑکرسبھی ٹیموں میں مسلم کھلاڑی شامل ہیں۔ عیاں رہے کہ ان مسلم کھلاڑیوں میں ملک وبیرون ملک کے شامل ہیں۔جیسے (چنئی سپر کنگس):عمران طاہر، آصف کے ایم، (دیئرڈیولس) شہبازندیم، محمد سمیع، اویس خان، (کنگس الیون پنجاب) مجیب زدران، منظور دار، (ممبئی انڈینس) مستفیض الرحمان، محسن خان، (راجستھان روائلس) ظہیرخان پکتین، (روائل چیلنجزس بنگلور) سرفراز خان، محمدسراج، معین علی، (سن رائزرس حیدرآباد) راشد خان ارمان، سیدخلیل احمد، ثاقب الحسن ، یوسف پٹھان، محمدنبی، سیدمہدی حسن۔
اس بارسب سے زیادہ مسلم کھلاڑی سن رائزرس حیدرآبادکی ٹیم میں ہیں۔ حیدر آباد کی ٹیم میں دھواں دھار بلے باز یوسف پٹھان اور بنگلہ دیش کے بائیں ہاتھ کے سپنر ثاقت الحسن اور راشدخان جیسے اہم نام ہیں۔چنئی سپر کنگس ٹیم میں ساؤتھ افریقن بالر عمران طاہر،دہلی ڈیئرڈیولس ٹیم میں تیزبالرمحمدسمیع بھروسے مندکھلاڑی ہیں۔اسی طرح ممبئی انڈینس میں مستفیض الرحمان اوربنگلورکی جانب سے کھیل رہے سرفرازخان اورمعین علی پرسب کی نگاہیں مرکوزرہیں گی۔ان کے علاوہ دیگرٹیموں کی جانب سے کھیل رہے نئے اورپرانے مسلم کھلاڑیوں پربھی نگاہیں مرکوزہوں گی۔
عیاں رہے کہ 2008 میں آئی پی ایل کا آغاز ہوا تھا۔ اس وقت اسے ایک گلوبل فیملی کا نام دیا گیا تھا ۔ سب سے زیادہ نقصان پاکستانی کھلاڑیوں کو ہوا ہے۔ نومبرسال2008 میں ممبئی میں ہونے والے حملے کے بعد سے کسی بھی پاکستانی کھلاڑی کو لیگ کی کسی ٹیم میں جگہ نہیں ملی۔
اس سے پہلے کے سیزن میں شاہد آفریدی (دکن چارجرز)، محمد آصف اور شعیب ملک (دہلی ڈیئرڈیولز)، محمد حفیظ، شعیب اختر، عمر گل اور سلمان بٹ (کولکتہ نائٹ رائیڈرز)، کامران اکمل، یونس خان اور سہیل تنویر (راجستھان رائلز) لیگ میں بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے تھے۔لیکن اس وقت سے دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی کی وجہ سے لیگ نے پاکستانی کھلاڑیوں سے دوری اختیار کرلی جو ہنوز جاری ہے۔
پہلے سیزن میں آٹھ ٹیموں میں مختلف ممالک کے 23 مسلم کرکٹر تھے۔ سال2014 میں تمام ٹیموں کے کل کھلاڑیوں کی تعداد 177 ہے لیکن ان میں مسلمان کرکٹر صرف دس ہی ہیں جن میں شکیب الحسن واحد غیر ملکی ہیں۔ سال 2013 میں یہ تعداد 19 تھی۔

Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *