عالمی کِڈنی ڈے پر آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس کی جانب سے سمپوزیم کا انعقاد

sayed-ahmad-khan
آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس کے زیراہتمام دریاگنج، نئی دہلی میں ’ورلڈ کڈنی ڈے‘ کے موقع پر8مارچ کو ایک سمپوزیم کا اہتمام کیا گیا۔ آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس کے سکریٹری جنرل ڈاکٹر سیّد احمد خاں نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ بکثرت دواؤں کے استعمال، پراگندہ ماحول اور ہوا کی آلودگی کے سبب گردوں کی بیماریوں میں بھی اضافہ ہورہا ہے۔ ہرسال مارچ مہینے کی دوسری جمعرات کو دنیا بھر میں ’ورلڈ کڈنی ڈے‘ (عالمی یوم گردہ) منایا جاتا ہے جس کا بنیادی مقصد لوگوں میں گردوں کی بیماریوں سے محفوظ رہنے اور ان میں خرابی لاحق ہونے کی صورت میں بہتر طریقۂ علاج اختیار کرنے کے لیے بے داری لانا ہے اور گردہ کی خرابی کی صورت میں یونانی طریقہ علاج سب سے بہتر ہے۔ ڈاکٹر سیّد احمد خاں نے یہ بھی کہا کہ لوگوں کو ہرحال میں اپنی صحت کے تعلق سے بے دار رہنا چاہیے خاص طور سے جو لوگ شوگر، امراض قلب و ریۂ، ہائی بلڈپریشر کے مرض میں مبتلا ہوں اور درد کی دوائیں بھی استعمال کر رہے ہوں انہیں خاص توجہ دینا ہوگا کہ دواؤں کا استعمال کم سے کم کیا جائے۔ یہاں تک کہ شوگر فری گولیوں اور پاؤڈر کے استعمال سے بھی گریز کریں۔ انہوں نے بتایا کہ عام طور سے شوگر فری گولیاں درد اور سوجن کم کرنے والی دوائیں لمبے عرصہ تک استعمال کرنے سے بھی گردے متاثر ہوتے ہیں اور بیماری لاحق ہوجاتی ہے، اس لیے ضروری ہے کہ دوائیں کم سے کم اور سندیافتہ ڈاکٹر کی نگرانی میں ہی استعمال کی جائیں۔

 

یہ بھی پڑھیں  ہادیہ کوراحت،سپریم کورٹ نے بحال کی شادی

 

ڈاکٹر سیّد احمد خاں نے مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ صاف پانی کا استعمال کثرت سے کیا جائے، کولڈ ڈرنکس اور پیکڈ مصنوعی پھلوں کے جوس سے احتیاط کیا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پیشاب کی حاجت کے وقت پیشاب کو نہ روکا جائے۔ پیشاب میں جلن اور خون یا پیپ آنے کی صورت میں فوری طور پر ڈاکٹر سے رجوع کریں۔ واضح ہو کہ اس سال ’ورلڈ کڈنی ڈے‘ کا موضوع ’کڈنیز اینڈ ویمنز ہیلتھ‘ ہے۔ اس موقع پر ڈاکٹر محمد طارق خاں نے اظہار خیال کرتے ہوئے حاملہ خواتین کو متنبہ کیا کہ وہ ہر ممکن کوشش کریں کہ سادہ اور تازہ کھانے کے ساتھ موسم کے پھل استعمال کریں اور تناؤ سے آزاد رہنے کی کوشش کریں اور دورانِ حمل کوئی بھی دوا بغیر سندیافتہ ڈاکٹر کے مشورہ کے استعمال نہ کریں۔ پروگرام کا تعارف ڈاکٹر ڈی آر سنگھ نے کرایا اور تمام شرکاء کا شکریہ حکیم عطاء الرحمن اجملی نے ادا کیا۔

 

یہ بھی پڑھیں   فلاح انسانیت اور مذہبی تشدد کے خاتمے کیلئے بین المذاہب بورڈ کا قیام
Share Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *